Mufti e-aazam
Upcoming SlideShare
Loading in...5
×
 

Mufti e-aazam

on

  • 489 views

Khawariji=wahabi=deobandi=ahle hadees=najdi=ghair muqaled=salafi=maududi=qadyani=tableeghi ,etc

Khawariji=wahabi=deobandi=ahle hadees=najdi=ghair muqaled=salafi=maududi=qadyani=tableeghi ,etc
Rawafiz=shia=asna ashari=zaidi=imamia=ismaeeli=jafari= ,etc

Statistics

Views

Total Views
489
Views on SlideShare
489
Embed Views
0

Actions

Likes
0
Downloads
3
Comments
0

0 Embeds 0

No embeds

Accessibility

Categories

Upload Details

Uploaded via as Microsoft Word

Usage Rights

© All Rights Reserved

Report content

Flagged as inappropriate Flag as inappropriate
Flag as inappropriate

Select your reason for flagging this presentation as inappropriate.

Cancel
  • Full Name Full Name Comment goes here.
    Are you sure you want to
    Your message goes here
    Processing…
Post Comment
Edit your comment

Mufti e-aazam Mufti e-aazam Document Transcript

  • ‫2‬ ‫سرکار مفتیٔ اعظم ہند الشاہ ابو‬ ‫البرکات‬‫محی الدین جیلنی ال رح م ٰن محمد‬ ‫ٓ‬ ‫مصطفی رضا خان قادری‬ ‫ولدت با سعادت‬‫مرج نع العلماء و الفقہاء س نیدی حضور مفت نی اعظ نم ہن ند حضرت‬ ‫ن ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫علمننہ الشاہ ابننو البرکات محننی الدیننن جیلنننی ال رحمٰن محمنند‬ ‫ٓ‬‫مصنطفی رضنا صناحب قبلہ نور اللہ مرقدہ کنی ولدت بنا سنعادت ۔‬‫۲۲ذوالحجہ ۰۱۳۱ھ بروز جمعہ صبح صادق کے وقت بریلی شریف‬ ‫میں ہوئی ۔‬‫پیدائشنی نام ‘‘ محمند ’’ عرف ‘‘مصنطفی رضنا’’ ہے ۔ مرشند برحنق‬‫حضرت شاہ ابو الحسین نوری قدس سرہ العزیزنے آل الرحمن ابو‬‫البرکات نام تجویز فرمایا اور چھہ ماہ کی عمر میں بریلی شریف‬‫تشریننف ل کننر جملہ سننلسل عالیننہ کننی اجازت و خلفننت عطننا‬‫فرمائی اور سناتھ ہی امام احمند رضنا قدس سنرہ کنو ینہ بشارت‬‫عظم یٰ سنائی کہ یہ بچہ دین و ملت کی بڑ ی خدمت کرے گا اور‬‫مخلوق خدا کنو اس کنی ذات سنے بہت فینض پہونچنے گنا۔ ینہ بچنہ‬ ‫ولی ہے ۔‬ ‫مرشد کامل کی بشارت‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫سنید المشائخ حضرت شاہ سنیدابوالحسین احمند نوری رضنی اللہ‬‫عنہ نے حضرت مفتی اعظم کو بیعت کرتے وقت ارشاد فرمایا!!!یہ‬‫بچہ دین وملت کی بڑی خدمت کرے گا اور مخلوقِ خدا کو اس کی‬‫ذات سے بہت فیض پہنچے گا۔ یہ بچہ ولی ہے۔ اس کی نگاہوں سے‬‫لکھوں گنم راہ انسنان دین ِن حنق پنر قائم ہوں گنے۔ ینہ فینض کادرینا‬‫بہائےگ نننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننا۔‬ ‫ن‬‫سید المشائخ حضرت نوری میاں علیہ الرحمہ نے حلقہئ بیعت میں‬‫لیننے کنے بعند قادری نسنبت کنا دریائے فینض بناکنر ابوالبرکات کنو امام‬‫احمننند رضنننا علینننہ الرحمنننہ کنننی گود مینننں دیتنننے ہوئے ارشاد‬‫فرمایا!!!مبارک ہو آپ کویہ قرآنی آیت،واجعل لی وزیرا من اھلی‬‫کننی تفسننیر مقبول ہوکننر آپ کننی گود میننں آگئی ہے۔ آل الرحمننن۔‬ ‫محمد۔ ابوالبرکات محی الدین جیلنی مصطفی رضا۔‬‫اس مبارک نام پر اگر غور کیا جائے تو سب سے پہلے یہ بات سمجھ‬‫میں آتی ہے کہ جب کسی شخص میں محاسن کی کثرت ہوتی ہے‬‫تو اس کاہر کام تشنہ تو صیف محسوس ہوتا ہے۔ اور ذوق ستائش‬‫کسنی جامنع الصنفات شخصنیت کنو مختلف ناموں سنے پکارننے پنر‬‫مجبور ہوتنا ہے۔ اس نام مینں پہلی نسنبت رحمنن سنے ہے۔ دوسنری‬‫نسبت سید عالم صلی اللہ علیہ وسلم سے ہے۔ تیسری نسبت سیدنا‬‫حضرت غوث اعظنم شینخ عبند القادر محنی الدینن جیلننی علینہ‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫الرحمہ سے ہے۔‬‫تیسری نسبت کے بعد عزیمت میں اعلیٰحضرت امام احمد رضا خاں‬‫علیننہ الرحمننہ سننے نسننبت ملحوظ رکھننی گئی ہے۔ یننہ اہتمام تننو‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫اکابرکی بالغ نظری نے کیا تھا۔ مگر لکھوں افراد نے جب اس منبعِ‬‫خینر وفلح اور سنرچشمہ ہداینت سنے قرینب ہوکنر فیوض وبرکات‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫حاصنل کینے تنو وہ بھنی اپننے جذبہئ سنتائش پنر قابوننہ پاسنکے۔ آج‬‫حضرت مفتننی اعظننم مختلف ناموں سننے یاد کیننے جاتننے ہیننں۔ اللہ‬‫تعالین اپننے اسنمائے صنفات کنا پنر تنو انہینں پرڈالتنا ہے جنو اس کنی‬ ‫ٰ‬ ‫بارگاہ میں مقبول ومحبوب ہوجاتے ہیں۔‬ ‫حصول علم‬‫سنخن آموزی کنے منزل طنے کرننے کنے بعند آپ کنی تعلینم کنا باقاعدہ‬‫آغاز ہوا ا ور آپ ننے جملہ علوم و فنون اپننے والد ماجند سنیدنا امام‬‫احمند رضنا فاضنل بریلوی قدس سنرہ ۔ برادر اکنبر حجنۃ السنلم‬‫حضرت علمنہ شاہ محمند حامند رضنا خاں صناحب علینہ الرحمنۃ و‬‫الرضوان۔ اسنتاذ السناتذہ علمنہ شاہ رحنم الہی منگلوری ۔ شینخ‬‫العلماء علمہ شاہ سید بشیر احمد علی گڑ ھی ۔ شمس العلماء‬‫علمہ ظہور الحسین فاروقی رامپوری سے حاصل کئے اور ۸۱ سال‬‫ک نی عم نر می نں تقریبا چالی نس علوم و فنون حاص نل ک نر ک نے س نند‬ ‫ن‬ ‫ن ن ن‬ ‫ن‬ ‫ن ن‬ ‫ن‬ ‫فراغت حاصل کی ۔‬‫تدریننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننننس‬‫فراغنت کنے بعند جامعنہ رضوینہ منظنر اسنلم بریلی شرینف ہی مینں‬‫مسنند تدرینس کنو روننق بخشنی۔، تقریبنا ًتینس سنال تنک علم و‬ ‫ن ن‬ ‫ن ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫حکمنت کنے درینا بہائے ۔ بر صنغیر پاک و ہنند کنی اکثنر درسنگاہیں آپ‬ ‫کے تلمذہ و مستفیدین سے مال مال ہیں ۔‬ ‫طریقہ تعلیم‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫فقیہ ذی شان مفتی محمد مطیع الرحمن رضوی مدیر عامالدارۃ‬‫الحنفینہ کشنن گننج بہار حضرت مفتنی اعظنم علینہ الرحمنہ کنے‬ ‫ن ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫طریقہئ تعلیننم اور درس افتاء میننں امتیازی شان بیان کرتننے ہوئے‬‫رقنننننننننننننننننننننننننننننننننننم طراز ہینننننننننننننننننننننننننننننننننننں۔‬‫حضور مفتی اعظم در سِ افتاء میں اس کا التزام فرماتے تھے کہ‬‫محض نف سِ حکم سے واقفیت نہ ہو بلکہ اس کے ماعلیہ ومالہ کے‬‫تمام نشیننب وفراز ذہن نشیننن ہوجائیننں۔ پہلے آیات واحادیننث سننے‬‫اسنتدلل کرتنے، پھنر اصنولِ فقنہ وحدینث سنے اس کنی تائیند دکھاتنے‬‫اور قواعدِ کلیہ کی روشنی میں اس کا جائزہ لے کر کتب فقہ سے‬‫جزئیات پینش فرماتنے ،پھنر مزیند اطمینان کےلئے فتاوینٰ رضوینہ ینا‬‫اعلیٰحضرت علینہ الرحمنہ کنا ارشاد نقنل فرماتنے۔ اگنر مسنئلہ مینں‬‫اختلف ہوتا تو قولِ راجح کی تعیین دلئل سے کرتے اور اصولِ افتا‬‫کنی روشننی مینں ماعلینہ الفتوین کنی نشاندہی کرتنے۔ پھنر فتاوین‬‫ٰ‬ ‫ٰ‬‫رضویہ یااعلیٰحضرت علیہ الرحمہ کے ارشاد سے اس کی تائید پیش‬‫فرماتنے۔ مگنر عموما ینہ سنب زباننی ہوتنا۔ عام طور سنے جواب بہت‬‫مختصر اور سادہ لکھنے کی تاکید فرماتے۔ ہاں کسی عالم کا بھیجا‬‫ہوا استفتا ہوتا اور وہ ان تفصیلت کا خواستگار ہوتا تو پھر جواب‬ ‫میں وہی رنگ اختیار کرنے کی بات ارشاد فرماتے۔‬‫فقینہ العصنر شارح بخاری مولننا محمند شرینف الحنق امجدی صندر‬‫مفت ننی الجامع ننۃ الشرفی ننہ مبارکپور حضرت امام الفقہاء مفت ننی‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫اعظنم علینہ الرحمنہ کنے درسن افتنا اور اصنلح فتاوینٰ کنے متعلق‬ ‫ِ‬ ‫تحریر فرماتے ہیں!!‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬ ‫مینں گیارہ سنال تینن ماہ خدمنت مینں حاضنر رہا۔ اس مدت مینں‬‫چوبینس ہزار مسنائل لکھنے ہینں، جنن مینں کنم از کنم دس ہزار وہ‬‫ہیں جن پر حضرت مفتی اعظم کی تصحیح وتصدیق ہے۔ عالم یہ‬‫ہوتنا کنہ دن بھنر بلکنہ بعند مغرب بھنی دوگھنٹنے تنک حاجنت مندوں‬‫کی بھیڑرہتی۔ یہ حاجت مند خوشخبری لے کر نہیں آتے،سب اپنا اپنا‬‫دکھڑا سناتے، غم آگیں واقعات سننے کے بعد دل ودماغ کا کیا حال‬‫ہوتا ہے وہ سب کو معلوم ہے۔ اتنے طویل عرصے تک اس غم آفریں‬‫ماحول سنے فارغ ہوننے کنے بعند، عشنا بعند پھنر تشرینف رکھتنے اور‬‫مینں اپننے لکھنے ہوئے مسنائل سنناتا۔ مینں گھسناپٹا نہینں،بہت سنوچ‬‫سنمجھ کنر، جاننچ تول کنر مسنئلہ لکھتنا،مگنر واہ رے مفتنی اعظنم۔‬‫اگنر کہینں ذرا بھنی غلطنی ہے، یالوچ ہے ینا بنے ربطنی ہے۔ یاتعبینر غینر‬‫مناسب ہے۔ یا سوال کے ماحول کے مطابق جواب میں کمی بیشی‬‫ہے۔ یا کہیں سے کوئی غلط فہمی کا ذرا بھی اندیشہ ہے فورا اس‬‫پنر تنبینہ فرمادیتنے اور مناسنب اصنلح۔تنقیند آسنان ہے مگنر اصنلح‬‫دشوار۔ جنو لکھنا گینا ہے وہ نہینں ہوننا چاہینے، اس کنو کوئی بھنی‬‫ذہینن نقاد کہہ سنکتا ہے،مگنر اسنکو بدل کرکینا لکھاجائے،ینہ جوئے‬‫شیرلنے سے کم نہیں ہے۔ مگر ستر سالہ مفتی اعظم کا دماغ اور‬‫علم ایسا جوان تھاکہ تنقیدکے بعد فورا اصلح فرمادیتے اور ایسی‬ ‫اصلح کہ پھر قلم ٹوٹ کررہ جاتا۔‬‫کبھنی ایسنے جاں فزاتبسنم کنے سناتھ کنہ قربان ہوننے کنا جذبنہ حند‬‫اضطرار کنو پہننچ جائے۔ کبھنی ایسنے جلل کنے سناتھ کنہ اعصناب‬‫جواب دے جائیں۔ مگر اس جلل کو کون سانام دیں جس کے بعد‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫مخاطنب کنی جرأت رنداننہ اور بڑھ جاتنی۔ کینا کیجئے گنا اگنر جلل‬‫سنے مرعوب ہوکنر چنپ رہتنے تنو اور جلل بڑھتنا،بڑھتنا رہتنا،یہاں تنک‬‫کنہ مخاطنب کنو عرض ومعروض کرننا ہی پڑتنا۔ ینہ جلل وہ جلل‬‫تھننننننننا کننننننننہ جننننننننو اس کننننننننا مورد بناکندن ہوگیننننننننا۔‬‫ینہ مجلس آدھنی رات سنے پہلے کبھنی ختنم ننہ ہوتنی۔ بار ہارات کنے‬ ‫دوبج جاتے اور رمضان شریف میں توسحری کا وقت روز ہوجاتا۔‬‫بارہا ایسا ہوتا کہ حکم کی تائید میں کوئی عبارت نہ ملتی تو میں‬‫اپننی صنواب دیدسنے حکنم لکنھ کردیتنا۔ کبھنی دوردراز کنی عبارت‬‫سے تائید لتا۔مگر مفتی اعظم ان کتابوں کی عبارتیں جودارالفتاء‬‫مینں ننہ تھینں زباننی لکھوادیتنے۔ مینں حیران رہ جاتنا۔ ینا اللہ کبھنی‬‫کتاب کا مطالعہ کرتے نہیں،یہ عبارتیں زبانی کیسے یاد ہیں؟پیچیدہ‬‫سے پیچیدہ دقیق سے دقیق مسائل پر بداہ ۃً ایسی تقریر فرماتے کہ‬ ‫معلوم ہوتا تھا اس پر بڑی محنت سے تیاری کی ہے۔‬‫سب جانتے ہیں کہ کلم بہت کم فرماتے مگر جب ضرورت ہوتی تو‬‫ایسنی بحنث فرماتنے کنہ اجلہ علماء انگشنت بدنداں رہ جاتنے۔ کسنی‬‫مس نئلہ می نں فقہا ک نے متعدد اقوال ہی نں ت نو س نب دماغ مینہروق نت‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫حاضنر رہتنے۔ سنب کنے دلئل،وجوہ ترجینح اور قولِ مختار ومفتنی بنہ‬‫پنر تیقنن اور ان سنب اقوال پنر اس کنی وجنہ ترجینح سنب ازبر۔ باب‬‫نکاح میں ایک مسئلہ ایسا ہے جس کی بہت ّر صورتیں ہیں اور کثیر‬‫الوقوع بھنی ہینں۔ پہلی بار جنب مینں ننے اس کنو لکھنا،سنوال مبہم‬‫تھنا۔ مینں ننے بینس،پچینس شنق قائم کرکنے چارورق فنل اسنکیپ کنا‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫غذپنر لکھنا جنب سننانے بیٹھنا تنو فرماینا!!!ینہ طول طوینل شنق‬‫درشق جواب کون سمجھ پائےگا؟ پھر اگر لوگ ناخداترس ہوئے تو‬‫جوشنق اپننے مطلب کنی ہوگنی اس کنے مطابنق واقعنہ بنالینں گنے۔ آج‬‫ہندوسنتان مینں ینہ صنورت رائج ہے اسنی کنے مطابنق حکنم لکنھ کنر‬‫بھیج دیں یہ قیدلگا کر کہ آپ کے یہاں یہی صورت تھی تو حکم‬ ‫یہ ہے۔‬‫ینہ جواب فنل اسنکیپ کنے آدھنے ورق سنے بھنی کنم پنر منع تائیدات‬ ‫آگیا۔‬‫اس واقعنہ ننے بتاینا کنہ کتنب بیننی سنے علم حاصنل کرلیننا اور بات ہے‬ ‫اور فتویٰ لکھنا اور بات۔‬ ‫مجاہدانہ زندگی‬‫آپ ک نی ۲۹ س نالہ حیات مبارک نہ می نں زندگ نی ک نے مختلف موڑ آئے ۔‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫کبھننی شدھننی تحریننک کننا قلع قمننع کرنننے کیلئے جماعننت رضائے‬‫مصطفی کی صدارت فرمائی اور باطل پرستوں سے پنجہ آزمائی‬‫کیلئے سنر سنے کفنن باندھ کنر میدان خارز ارمینں کود پنڑ ے ، لکھوں‬‫انسنانوں کنو کلمنہ پنڑ ھاینا اور بنے شمار مسنلمانوں کنے ایمان کنی‬‫حفاظنت فرمائی ۔ قیام پاکسنتان کنے نعرے اور خلفنت کمیٹنی کنی‬‫آوازیں بھی آپ کے دور میں اٹھیں اور ہزاروں شخصیات اس سے‬‫متاثر ہوئیں۔ نسبندی کا طوفان بل خیز آپ کے آخری دور میں رونما‬‫ہوا اور بننڑ ے بننڑ ے ثابننت قدم متزلزل ہوگئے لیکننن ہر دور میننں آپ‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫اسنتقامت فنی الدینن کنا جبنل عظینم بنن کنر ان حوادث زماننہ کنا‬ ‫مقابلہ خندہ پیشانی سے فرماتے رہے ۔‬‫آپ ننے اس دور پنر فتنن مینں نسنبندی کنی حرمنت کنا فتوی صنادر‬‫فرماینا جبکنہ عمومنا دیننی ادارے خاموش تھنے ، ینا پھنر جواز کنا‬ ‫فتوی دے چکے تھے ۔‬ ‫عبادت و ریاضت‬‫سنفر و حضنر ہر موقنع پنر کبھنی آپ کنی نماز پنجگاننہ قضنا نہینں‬‫ہوتنی تھنی، ہر نماز وقنت پنر ادا فرماتنے ، سنفر مینں نماز کنا اہتمام‬‫نہاینت مشکنل ہوتنا ہے لیکنن حضنر ت پوری حیات مبارکنہ اس پنر‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫عامل رہے ۔ اس سلسلہ میں چشم دید واقعات لوگ بیان کرتے ہیں‬‫کنہ نماز کنی ادائیگنی و اہتمام کیلئے ٹرینن چھوٹننے کنی بھنی پرواہ‬‫نہیں فرماتے تھے ، خود نماز ادا کرتے اور ساتھیوں کو بھی سخت‬ ‫تاکید فرماتے ۔‬ ‫زیارت حرمین شریفین‬‫آپ نے تقسیم ہند سے پہلے دو مرتبہ حج و زیارت کیلئے سفر فرمایا،‬‫اس کے بعد تیسری مرتبہ ۱۹۳۱ ھ / ۱۷۹۱ ء میں جب کہ فوٹو لزم‬‫ہو چکنا تھنا لیکنن آپ اپننی حزم و احتیاط پنر قائم رہے لہذا آپ کنو‬‫پاسنپورٹ وغیرہ ضروری پابندیوں سنے مسنتثنی قرار دے دینا گینا اور‬‫آپ ح نننننج و زیارت ک نننننی س نننننعادت س نننننے س نننننرفراز ہوئے ۔‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫سفرحج و مسئلہ تصویر‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫اپ نے تین مرتبہ حنج و زیارت کی سعادت حاصنل کی مگر کبھی‬ ‫ٓ‬‫تصویر نہیں بنوائی بلکہ ہر بار بغیر تصویر کے پاسپورٹ سے حج پر‬‫تشرینف لے گئے۔ تیسنری مرتبنہ حنج بینت اللہ پنر جاتنے وقنت حکومنت‬‫بھارت کنی جاننب سنے پاسنپورٹ پنر تصنویر لگانےکنا قانون سنخت ہو‬‫گینا تھنا۔ چنانچنہ اپ سنے تصنویر لگاننے کنا کہا گینا تنو اپ ننے برجسنتہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬‫انکار کرتنے ہوئے فرماینا" مجنھ پنر جنو حنج فرض تھنا وہ مینں ننے‬‫کرلینا، اب نفنل حنج کیلئے اتننا بڑا ناجائز کام کرکنے دربار مصنطفوی‬‫مینں کیسنے حاضنر ہوسنکتا ہوں، مینں تصنویر ہرگنز نہینں کھینچواؤں‬‫گنا۔ جنب اس سنے قبنل گینا تھنا، اس وقنت تصنویر کنی پابندی نہینں‬‫تھنی۔ بڑے افسنوس کنی بات ہے کنہ جنس رسنول محترم صنلی اللہ‬‫علینہ وسنلم کنی شریعنت مطہرہ مینں تصنویر کھینچواننا،رکھننا،بناننا‬‫سنب حرام ہے،مینں اس رسنول محترم صنلی اللہ علینہ وسنلم کنی‬‫بارگاہ میں تصویر کھینچوا جاؤں، یہ مجھ سے نہیں ہوگا"۔ حضور‬‫تاجدار مدینہ سرور قلب و سینہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنے اس‬‫غلم کنی اسنتقامت و اتباع سننت کنی ینہ ادا پسنند ائی تنو اپننے دربار‬ ‫ٓ‬‫مینں حاضری کیلئے خصنوصی انتظام فرماینا اور احباب ننے جنب بغینر‬‫تصنویر پاسنپورٹ کیلئے کوشنش کنی تنو حکومنت ہنند اور حکومنت‬‫سنعودی عرب ننے اپ کنو خصنوصی اجازت نامنہ جاری کینا اور پھنر‬ ‫ٓ‬‫جب اپ جدہ پہنچے تو اپ کا شاندار استقبال کیا گیا اور جب مدینہ‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬‫منورہ میں داخل ہوئے تو برہنہ پاپیادہ انکھوں سے انسو جاری اور‬ ‫ٓ‬ ‫ٓ‬‫جسم پر رقت طاری تھی اور حاضری مدینہ طیبہ کا بڑا پ ُر کیف و‬ ‫ایمان افروز منظر تھا۔‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬ ‫فتوی نویسی کی مدت‬‫آپ کنے خاندان کنا ینہ طرہ امتیاز رہا ہے کنہ تقریبنا ً ڈینڑ ھ سنو سنال‬‫سنے فتوی نویسنی کنا گراں قدر فریضنہ انجام دے رہا ہے ۔ ۱۳۸۱ ھ‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫مینں سنیدنا اعلین حضرت قدس سنرہ کنے جند امجند امام العلماء‬ ‫ٰ‬‫حضرت مفتی رضا علی خاں صاحب قدس سرہ نے بریلی کی سر‬‫زمینن پنر مسنند افتاء کنی بنیاد رکھنی ، پھنر اعلین حضرت کنے والد‬ ‫ٰ‬‫ماجد علمہ مفتی نقی علی خاں صاحب قدس سرہ نے یہ فریضہ‬‫انجام دینا اور متحدہ پاک و ہنند کنے جلینل القدر علماء مینں آپ کنو‬‫سر فہرست مقام حاصل تھا ، ان کے بعد امام احمد رضا قد س‬‫سنرہ ننے تقریبنا نصنف صندی تنک علوم و معارف کنے درینا بہائے اور‬‫فضنل و کمال کنے ایسنے جوہر دکھائے کنہ علمائے ہندہی نہینں بلکنہ‬‫فقہائے حرمینن طیبینن سنے بھنی خراج تحسنین وصنول کینا اور سنب‬ ‫نے بالتفاق چودہویں صدی کا مجدد اعظم تسلیم کیا ۔‬‫آپ کے وصال اقدس کے بعد آپ کے فرزند اکبر حجۃ السلم نے اس‬‫منصب کو زینت بخشی اور پھر باقاعدہ سیدنا حضور مفتی اعظم‬‫کنو ینہ عہدہ تفوینض ہوا جنس کنا آغاز خود امام احمند رضنا کنی‬‫حیات طیبننننننننننننہ ہی میننننننننننننں ہو چکننننننننننننا تھننننننننننننا ۔‬‫آپ ننے مسنئلہ رضاعنت سنے متعلق اینک فتوی ننو عمری کنے زماننے‬‫میں بغیر کسی کتاب کی طرف رجوع کئے تحریر فرمایا تو اس سے‬‫متاثننر ہو کننر امام احمنند رضننا نننے فتوی نویسننی کننی عام اجازت‬‫فرمادی اور مہر بھنی بنوا کنر مرحمنت فرمائی جنس پنر ینہ عبارت‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫کندہ تھنی ‘‘ ابنو البرکات محنی الدینن جیلننی آل الرحمنن‬‫محمنننننننننننند عرف مصننننننننننننطفی رضننننننننننننا’ ’‬‫ینہ مہر دیننی شعورکنی سنند اور اصنابت فکنر کنا اعلن تھنی۔ بلکنہ‬‫خود امام احم ند رض نا ن نے ج نب پورے ہندوس نتان ک نے لئے دار القضاء‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن ن ن‬ ‫ن‬‫شرعی کا قیام فرمایا تو قاضی و مفتی کا منصب صدر الشریعہ ،‬‫مفتنی اعظنم اور برہان الحنق جبنل پوری قدس اسنرارہم کنو عطنا‬ ‫فرمایا ۔‬‫غرضک نہ آپ ن نے نص نف ص ندی س نے زیادہ مدت ت نک لکھوں فتاوی‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫لکھے ۔ اہل ہندو پاک اپنے الجھے ہوئے مسائل آپ کی خدمت میں لے‬‫کر حاضر ہوتے اور ہر پیدا ہونے والے مسئلہ میں فیصلہ کے لئے نگاہیں‬‫آپ ہی کنننی طرف اٹھتنننی تھی ننں ۔ آپ ک ننے فتاوی ک ننا وہ ذخیرہ‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬‫محفوظ ننہ رہ سنکا ورننہ آج وہ اپننی ضخاننت و مجلدات کنے اعتبار‬ ‫سے دوسرا فتاوی رضویہ ہوتا۔‬ ‫تصنیفات و ترتیبات‬‫آپ کنی تصنانیف علم و تحقینق کنا منارہ ہداینت ہینں ۔ جنس موضوع‬‫پنر قلم اٹھاتنے ہینں حنق تحقینق ادا فرماتنے ہینں ، فقینہ ملت حضرت‬‫مفنی جلل الدینن صناحب قبلہ علینہ الرحمنہ ننے آپ کنی تصنانیف کنا‬ ‫تعارف تحریر فرمایا ہے اسی کا خلصہ ہدیۂ قارئین ہے ۔‬‫١ المکرمصۃ النبویصۃ فصصی اللفتاوی المصصصطفویة )ینہ پہلے تینن حصنوں مینں‬‫عالی جناب قربان علی صناحب کنے اہتمام مینں شائع ہو ا تھنا ۔ اب‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫اینک ضخینم جلد مینں حضرت فقینہ ملت علینہ الر حمنہ کنی نگراننی‬‫می نں رض نا اکیڈم نی بمبئی س نے شائع ہو ا ہے ج نو حس نن ص نوری و‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫معنوی سے مال مال ہے.(‬ ‫٢ اشد العذاب علی عابد الخناس )۸۲۳۱( تحذیر الناس کا رد بلیغ‬ ‫3 وقعات السنان فی حلق المسماۃ بسط البنان )۰۳۳۱( بسط البنان اور‬ ‫تحذیر الناس پر تنقید اور ۲۳۱سوال ت کامجموعہ‬ ‫٤ الرمح الدیانی علی راس الوسواس الشیطانی )۱۳۳۱( تفسیر نعمانی کے‬ ‫مولف پر حکم کفر وارتداد گویا یہ حسام الحرمین کا خلصہ ہے‬ ‫5 النکتہ علی مراۃ کلکتہ )۲۳۳۱( اذان خارج مسجد ہونے پر ائمہ کی‬ ‫تصریحات کا خلصہ‬ ‫6 صلیم الدیان لتقطیع حبالۃ الشیطان )۲۳۳۱(‬ ‫7 سیف القہار علی عبد الکفار )۲۳۳۱(‬ ‫8 نفی العار عن معائب المولوی عبد الغفار )۲۳۳۱(‬ ‫9 مقتل کذب وکید )۲۳۳۱(‬‫01 مقتل اکذب و اجہل )۲۳۳۱( اذان ثانی کے تعلق سے سے مولوی‬ ‫عبد الغفار خاں رامپور ی کی متعدد تحریروں کے رد میں یہ‬ ‫رسائل لکھے گئے‬ ‫11 ادخال السنان الی الحنک الحلق البسط البنان )۲۳۳۱(‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬ ‫21 وقایۃ اہل السنۃ عن مکر دیوبند و الفتنۃ )۲۳۳۱( اذان ثانی سے‬ ‫متعلق آیک کانپوری دیوبندی کا رد‬ ‫31 الہی ضرب بہ اہل الحرب )۲۳۳۱(‬‫41 الموت الحمر علی کل انحس اکفر )۷۳۳۱( موضوع تکفیر پر نہایت‬‫معرکۃ الراء بحثیں اس کتاب میں تحقیق سے پیش کی گئی ہیں‬ ‫51 الملفوظ ، چار حصے )۸۳۳ا( امام احمد رضا قدس سرہ کے‬ ‫ملفوظات‬ ‫61 القول العجیب فی جواز التثویب )۹۳۳۱( اذان کے بعد صلوۃ پکارنے‬ ‫کا ثبوت‬ ‫71 الطاری الداری لہفوات عبد الباری )۹۳۳۱( امام احمد رضا فاضل‬‫بریلو ی اور مولنا عبد الباری فرنگی محلی کے درمیان مراسلت کا‬ ‫مجموعہ‬ ‫81 طرق ا لہدی و الرشاد الی احکام المارۃ و الجہاد )۱۴۳۱( اس‬ ‫رسالہ میں جہاد، خلفت ، ترک موالت ، ، نان کو آپریشن اور‬ ‫قربانی گاؤ وغیرہ کے متعلق چھہ سوالت کے جوابات‬ ‫91 فصل الخلفۃ )۱۴۳۱( اس کا دوسر ا نام سوراج در سوراخ ہے‬ ‫اور مسئلہ خلفت سے متعلق ہے‬ ‫02 حجۃ واہرہ بوجوب الحجۃ الحاضرہ )۲۴۳۱( بعض لیڈروں کا رد‬ ‫جنہوں نے حج بیت اللہ سے ممانعت کی تھی اور کہا تھا کہ‬ ‫شریف مکہ ظالم ہے‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬‫12 القسورۃ علی ادوار الحمر الکفرۃ )۳۴۳۱( جس کا لقبی نام ظفر‬ ‫علی رمۃ کفر۔۔اخبار زمیندار میں شائع ہونے والے تین کفری‬ ‫اشعارکارد بلیغ‬ ‫22 سامان بخشش )نعتیہ دیوان( ) ۷۴۳۱(‬ ‫32 طرد الشیطان )عربی( نجدی حکومت کی جانب سے لگائے گئے‬ ‫حج ٹیکس کا رد‬ ‫42 مسائل سماع‬ ‫52 سلک مرادآباد پر معترضانہ رمارک‬ ‫62 نہایۃ السنان بسط البنان کا تیسرارد‬ ‫72 شفاء العی فی جواب سوال بمبئی اہل قرآن اور غیر مقلدین کا‬ ‫اجتماعی رد‬ ‫82 الکاوی فی العاوی و الغاوی )۰۳۳۱(‬ ‫92 القثم القاصم للداسم القاسم )۰۳۳۱(‬ ‫03 نور الفرقان بین جند اللہ و احزاب الشیطان )۰۳۳۱(‬ ‫13 تنویر الحجۃ بالتواء الحجۃ‬ ‫23 وہابیہ کی تقیہ بازی‬ ‫33 الحجۃ الباہرہ‬ ‫43 نور العرفان‬ ‫53 داڑ ھی کا مسئلہ‬ ‫63 حاشیہ الستمداد ) کشف ضلل ویوبند(‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬ ‫73 حاشیہ فتاوی رضویہ اول‬ ‫83 حاشیہ فتاوی رضویہ پنجم‬ ‫بعض مشاہیر تلمذہ‬‫بعض مشہور تلمذئہ کرام کے اسماء اس طرح ہیں جو بجائے خود‬ ‫استاذ الساتذہ شمار کئے جاتے ہیں ۔‬ ‫۱۔ شیر بشیۂ اہل سنت حضرت علمہ محمد حشمت علی خاں‬ ‫صاحب قدس سرہ‬‫۲۔ محدث اعظم پاکستان حضرت علمہ مفتی سردار احمد صاحب‬ ‫علیہ الرحمۃ و الرضوان‬ ‫۳۔ فقیہ عصر مولنا مفتی محمد اعجاز ولی خاں صاحب بریلی‬ ‫شریف علیہ الرحمۃ و الرضوان‬‫۴۔ فقیہ عصر شارح بخاری مفتی محمد شریف الحق امجدی دامت‬ ‫علیہ الرحمہ‬‫۵۔ محدث کبیر علمہ محمد ضیاء المصطفی اعظمی شیخ الحدیث‬ ‫الجامعۃ الشرفیہ مبارکپور‬‫۶۔ بلبل ہند مفتی محمد رجب علی صاحب نانپاروی ، بہرائچ شریف‬ ‫۷۔ شیخ العلماء مفتی غلم جیلنی صاحب گھوسوی‬ ‫مستفیدین اور درس افتاء کے تلمذہ کی فہرست نہایت طویل ہے‬ ‫جن کے احاطہ کی اس مختصر میں گنجائش نہیں ، صرف اتنا‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬ ‫سمجھ لینا کافی ہے کہ آسمان افتاء کے آفتاب و ماہتاب بنکر‬‫چمکنے والے مفتیان عظام اسی عبقری شخصیت کے خوان کرام کے‬ ‫خوشہ چین رہے جس سے یہ بات روز روشن کی طرح عیاں‬ ‫ہوجاتی ہے کہ حضور مفتی اعظم ہند کو افتاء جیسے وسیع و‬‫عظیم فن میں ایسا تبحر اور ید طولیٰ حاصل تھا کہ ان کے دامن‬ ‫فضل و کرم سے وابستہ ہو کر ذرے ماہتاب بن گئے ۔‬ ‫بعض مشاہیر خلفاء‬ ‫۱۔ مفسر اعظم ہند مولنامحمد ابراہیم رضا خاں جیلنی میاں‬ ‫بریلی شریف‬ ‫۲۔ غزالی دوراں علمہ سید احمد سعید صاحب کاظمی، ملتان‬ ‫پاکستان‬ ‫۳۔ مجاہد ملت علمہ حبیب الرحمن صاحب رئیس اعظم اڑ یسہ‬‫۴۔ شیر بیشہ اہل سنت مولنا حشمت علی خاں صاحب، پیلی بھیت‬ ‫۵۔ رازی زماں مولنا حاجی مبین الدین صاحب امروہہ ، مرآد اباد‬ ‫۶۔ شہزادۂ صدر الشریعہ مولنا عبد المصطفی صاحب ازہری‬ ‫کراچی ، پاکستان‬ ‫۷۔ شارح بخاری مفتی محمد شریف الحق صاحب امجدی‬ ‫گھوسی، اعظم گڑ ھ‬‫۸۔ شمس العلماء مولنا قاضی شمس الدین احمد صاحب جونپور‬ ‫۹۔ محدث اعظم پاکستان مولنا محمد سردار احمد صاحب لئل‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬ ‫پور ، پاکستان‬ ‫۰۱۔ خطیب مشرق مولنا مشتاق احمد صاحب نظامی الہ آباد۔‬ ‫۱۱۔ پیر طریقت مولنا قاری مصلح الدین صاحب کراچی پاکستان‬ ‫۲۱۔ استاذ العلماء مولنا محمد تحسین رضا خاں صاحب بریلی‬ ‫شریف‬ ‫۳۱۔ قائد ملت مولنا ریحان رضا خاں صاحب بریلی شریف‬‫۴۱۔ تاج الشریعہ مولنا محمد اختر رضا خاں صاحب بریلی شریف‬ ‫۵۱۔ پیر طریقت مولنا سید مبشر علی میاں صاحب بہیڑ ی بریلی‬ ‫شریف‬ ‫۶۱۔ فاضل جلیل مولنا سید شاہد علی صاحب الجامعۃ السلمیہ‬ ‫رامپور‬ ‫۷۱۔ حضرت مفتی محمد خلیل خاں برکاتی، پاکستان‬ ‫۸۱۔ حضرت سید امین میاں قادری بارکاتی، مارہرہ شریف، انڈیا‬ ‫۹۱۔ حضرت علمہ مشتاق احمد نظامی، انڈیا‬ ‫۰۲۔ حضرت مفتی محمد حسین قادری، سکھر، پاکستان‬ ‫۱۲۔ حضرت مولنا عبد الحمید پالمر، ساوتھ افریقہ‬‫۲۲۔ حضرت علمہ مولنا شیخ عبد الھادی القادری، ساوتھ افریقہ‬ ‫وغیرہ‬ ‫تاریخ وصال،اور عمر شریف‬ ‫لفظ طہ میں ہے مضمران کی تاریخ وصال‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬
  • ‫2‬ ‫چودھویں کی رات کو وہ بے گمانجاتا رہا‬ ‫محبوب ذوالجلل کا عاشق صادق، اسلم وسنت کا مہکتاگلشن‬ ‫شریعت وطریقت کا نیرتاباں، علم وفضل کا گوہ گراں،امام‬ ‫ابوحنیفہ کی فکر،امام رازی کی حکمت،امام غزالی کا تصوف،‬ ‫امام احمد رضا کی آنکھ کا تارا اور ہم سنیوں کا سہارا، اکانوے‬ ‫سال اکیس دن کی عمر میں مختصر عللت کے بعد ٤١، محرم‬ ‫الحرام ٢٠٤١ھ،٢١نومبر ١٨٩١ء رات ایک بج کر چالیس منٹ پر‬ ‫کلمہ طیبہ کا ورد کرتا ہوا خالقِ حقیقی سے جامل۔ انالّٰہ واناالیہ‬ ‫ل‬ ‫راجعون‬ ‫حضرت مفتی اعظم کے وصال پر ملل کی خبر دنیا کے مشہور‬ ‫ریڈیو اسٹیشنوں نے نشر کی۔ اگلے روزنماز جمعہ کے بعد اسلمیہ‬‫کالج کے وسیع میدان میں تین بج کر پندرہ منٹ پر نمازجنازہ ہوئی‬‫اور تقریبا چھ بجے اعلیحضرت فاضل بریلوی علیہ الرحمہ کے بائیں‬ ‫پہلو میں سپرد خاک کردیا گیا۔ نماز جنازہ میں لکھوں افراد‬ ‫کاٹھاٹھیں مارتا ہوا سمندر تھا۔ جو حضور مفتی اعظم کی‬ ‫مقبولیت وشہرت اور جللتِ شان کا کھلثبوت تھا۔‬ ‫‪Copy right by www.fikreraza.org‬‬