Khawarijies will come out of najd area
Upcoming SlideShare
Loading in...5
×
 

Khawarijies will come out of najd area

on

  • 392 views

 

Statistics

Views

Total Views
392
Views on SlideShare
392
Embed Views
0

Actions

Likes
0
Downloads
1
Comments
0

0 Embeds 0

No embeds

Accessibility

Categories

Upload Details

Uploaded via as Microsoft Word

Usage Rights

© All Rights Reserved

Report content

Flagged as inappropriate Flag as inappropriate
Flag as inappropriate

Select your reason for flagging this presentation as inappropriate.

Cancel
  • Full Name Full Name Comment goes here.
    Are you sure you want to
    Your message goes here
    Processing…
Post Comment
Edit your comment

Khawarijies will come out of najd area Khawarijies will come out of najd area Document Transcript

  • Khawarijies will come out of Najd Area [presentday Riyadh ] in Saudi ArabiaSAhih Bukhari Book 88 Hadith 214Narrated Ibn Umar:The Prophet said, "O Allah! Bestow Your blessings on our Sham! OAllah! Bestow Your blessings on our Yemen." The People said, "Andalso on our Najd." He said, "O Allah! Bestow Your blessings on ourSham (north)! O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen." Thepeople said, "O Allahs Apostle! And also on our Najd." I think thethird time the Prophet said, "There (in Najd) is the place ofearthquakes and afflictions and from there comes out the side of thehead of Satan."Bukhari Book 17 Hadith 147Narrated Ibn Umar:(The Prophet) said, "O Allah! Bless our Sham and our Yemen." Peoplesaid, "Our Najd as well." The Prophet again said, "O Allah! Bless ourSham and Yemen." They said again, "Our Najd as well." On that theProphet said, "There will appear earthquakes and afflictions, and fromthere will come out the side of the head of Satan."Najd is a part of Saudi Arabia and old name of Present day RiyadhMedieval Muslim geographers spent a great amount of time decidingthe exact boundaries between Hejaz and Nejd in particular, but
  • generally set the western boundaries of Nejd to be wherever thewestern mountain ranges and lava beds began to slope eastwards, andset the eastern boundaries of Nejd at the narrow strip of red sanddunes known as the Ad-Dahna Desert, some 100 km (62 mi) east ofmodern-day Riyadh. The southern border of Nejd has always been setat the large sea of sand dunes known today as Rub al Khali (the EmptyQuarter), while the southwestern boundaries are marked by the valleysof Wadi Ranyah, Wadi Bisha, and Wadi Tathlith.
  • Hadith # 1Bukhari Book61 Hadith 578Narrated Abu Said Al-Khudri:I heard Allahs Apostle saying, "There will appear some people amongyou whose prayer will make you look down upon yours, and whosefasting will make you look down upon yours, but they will recite theQuran which will not exceed their throats (they will not act on it) andthey will go out of Islam as an arrow goes out through the game
  • whereupon the archer would examine the arrowhead but see nothing,and look at the unfeathered arrow but see nothing, and look at thearrow feathers but see nothing, and finally he suspects to findsomething in the lower part of the arrow."Hadith # 2Malik Book 15 Hadith 15.4.10Yahya related to me from Malik from Yahya ibn Said from Muhammadibn Ibrahim ibn al-Harith at-Taymi from Abu Salama ibn Abd ar Rahmanthat Abu Said said that he had heard the Messenger of Allah, may Allahbless him and grant him peace, say, "A group of people will appearamong you whose prayer, fasting and deeds will make you think little ofyour own prayer, fasting and deeds. They will recite the Quran, but itwil not get past their throats, and they will pass through the deen likean arrow passes through game. You look at the arrowhead, and you seenothing, and you look at the shaft, and you see nothing, and you look atthe flights, and you see nothing. And you are in doubt about the notch."Hadith # 3Bukhari Book 55 Hadith 558
  • Narrated Ibn Abbas:The Prophet said, "I have been made victorious with As-Saba (i.e. aneasterly wind) and the people of Ad were destroyed by Ad-Dabur (i.e. awesterly wind)." Narrated Abu Said: Ali sent a piece of gold to theProphet who distributed it among four persons: Al-Aqra bin Habis Al-Hanzali from the tribe of Mujashi, Uyaina bin Badr Al-Fazari, Zaid At-Tai who belonged to (the tribe of) Bani Nahban, and Alqama binUlatha Al-Amir who belonged to (the tribe of) Bani Kilab. So theQuraish and the Ansar became angry and said, "He (i.e. the Prophet, )gives the chief of Najd and does not give us." The Prophet said, "I givethem) so as to attract their hearts (to Islam)." Then a man with sunkeneyes, prominent checks, a raised forehead, a thick beard and a shavenhead, came (in front of the Prophet ) and said, "Be afraid of Allah, OMuhammad!" The Prophet said "Who would obey Allah if I disobeyedHim? (Is it fair that) Allah has trusted all the people of the earth to mewhile, you do not trust me?" Somebody who, I think was Khalid bin Al-Walid, requested the Prophet to let him chop that mans head off, buthe prevented him. When the man left, the Prophet said, "Among theoff-spring of this man will be some who will recite the Quran but theQuran will not reach beyond their throats (i.e. they will recite likeparrots and will not understand it nor act on it), and they will renegadefrom the religion as an arrow goes through the games body. They willkill the Muslims but will not disturb the idolaters. If I should live up totheir time I will kill them as the people of Ad were killed (i.e. I will killall of them)."Hadith # 4
  • Bukhari Book 61 Hadith 577Narrated Ali:I heard the Prophet saying, "In the last days (of the world) there willappear young people with foolish thoughts and ideas. They will givegood talks, but they will go out of Islam as an arrow goes out of itsgame, their faith will not exceed their throats. So, wherever you findthem, kill them, for there will be a reward for their killers on the Day ofResurrection."Hadith # 5Bukhari Book 56 Hadith 807Narrated Abu Said Al-Khudri:While we were with Allahs Apostle who was distributing (i.e. someproperty), there came Dhu-l-Khuwaisira, a man from the tribe of BaniTamim and said, "O Allahs Apostle! Do Justice." The Prophet said,"Woe to you! Who could do justice if I did not? I would be a desperateloser if I did not do justice." Umar said, "O Allahs Apostle! Allow me tochop his head off." The Prophet said, "Leave him, for he hascompanions who pray and fast in such a way that you will consider yourfasting negligible in comparison to theirs. They recite Quran but it doesnot go beyond their throats (i.e. they do not act on it) and they willdesert Islam as an arrow goes through a victims body, so that thehunter, on looking at the arrows blade, would see nothing on it; hewould look at its Risaf and see nothing: he would look at its Na,di and
  • see nothing, and he would look at its Qudhadh ( 1 ) and see nothing(neither meat nor blood), for the arrow has been too fast even for theblood and excretions to smear. The sign by which they will berecognized is that among them there will be a black man, one of whosearms will resemble a womans breast or a lump of meat moving loosely.Those people will appear when there will be differences amongst thepeople." I testify that I heard this narration from Allahs Apostle and Itestify that Ali bin Abi Talib fought with such people, and I was in hiscompany. He ordered that the man (described by the Prophet ) shouldbe looked for. The man was brought and I looked at him and noticedthat he looked exactly as the Prophet had described him.Hadith # 6Bukhari Book 56 Hadith 808Narrated Ali:I relate the traditions of Allahs Apostle to you for I would rather fallfrom the sky than attribute something to him falsely. But when I tellyou a thing which is between you and me, then no doubt, war is guile. Iheard Allahs Apostle saying, "In the last days of this world there willappear some young foolish people who will use (in their claim) the bestspeech of all people (i.e. the Quran) and they will abandon Islam as anarrow going through the game. Their belief will not go beyond theirthroats (i.e. they will have practically no belief), so wherever you meetthem, kill them, for he who kills them shall get a reward on the Day ofResurrection."
  • Hadith # 7Bukhari Book 59 Hadith 638Narrated Abu Said Al-Khudri:Ali bin Abi Talib sent a piece of gold not yet taken out of its ore, in atanned leather container to Allahs Apostle . Allahs Apostle distributedthat amongst four Persons: Uyaina bin Badr, Aqra bin Habis, Zaid Al-Khail and the fourth was either Alqama or Amir bin At Tufail. On that,one of his companions said, "We are more deserving of this (gold) thanthese (persons)." When that news reached the Prophet , he said, "Dontyou trust me though I am the truth worthy man of the One in theHeavens, and I receive the news of Heaven (i.e. Divine Inspiration) bothin the morning and in the evening?" There got up a man with sunkeneyes, raised cheek bones, raised forehead, a thick beard, a shaven headand a waist sheet that was tucked up and he said, "O Allahs Apostle! Beafraid of Allah." The Prophet said, "Woe to you! Am I not of all thepeople of the earth the most entitled to fear Allah?" Then that manwent away. Khalid bin Al-Wahd said, "O Allahs Apostle! Shall I chop hisneck off?" The Prophet said, "No, for he may offer prayers." Khalid said,"Numerous are those who offer prayers and say by their tongues (i.e.mouths) what is not in their hearts." Allahs Apostle said, "I have notbeen ordered (by Allah) to search the hearts of the people or cut opentheir bellies." Then the Prophet looked at him (i.e. that man) while thelatter was going away and said, "From the offspring of this (man therewill come out (people) who will recite the Quran continuously andelegantly but it will not exceed their throats. (They will neitherunderstand it nor act upon it). They would go out of the religion (i.e.
  • Islam) as an arrow goes through a games body." I think he also said, "IfI should be present at their time I would kill them as the nations aThamud were killed."Hadith # 8Bukhari Book 84 Hadith 65Narrated Abdullah bin Amr bin Yasar:That they visited Abu Said Al-Khudri and asked him about Al-Harauriyya, a special unorthodox religious sect, "Did you hear theProphet saying anything about them?" Abu Said said, "I do not knowwhat Al-Harauriyya is, but I heard the Prophet saying, "There willappear in this nation---- he did not say: From this nation ---- a group ofpeople so pious apparently that you will consider your prayers inferiorto their prayers, but they will recite the Quran, the teachings of whichwill not go beyond their throats and will go out of their religion as anarrow darts through the game, whereupon the archer may look at hisarrow, its Nasl at its Risaf and its Fuqa to see whether it is blood-stainedor not (i.e. they will have not even a trace of Islam in them).Hadith # 9Bukhari Book 93 Hadith 527Narrated Abu Said Al-Khudri:
  • When Ali was in Yemen, he sent some gold in its ore to the Prophet.The Prophet distributed it among Al-Aqra bin Habis Al-Hanzali whobelonged to Bani Mujashi, Uyaina bin Badr Al-Fazari, Alqama binUlatha Al-Amiri, who belonged to the Bani Kilab tribe and Zaid AI-KhailAt-Tai who belonged to Bani Nabhan. So the Quraish and the Ansarbecame angry and said, "He gives to the chiefs of Najd and leaves us!"The Prophet said, "I just wanted to attract and unite their hearts (makethem firm in Islam)." Then there came a man with sunken eyes, bulgingforehead, thick beard, fat raised cheeks, and clean-shaven head, andsaid, "O Muhammad! Be afraid of Allah! " The Prophet said, "Whowould obey Allah if I disobeyed Him? (Allah). He trusts me over thepeople of the earth, but you do not trust me?" A man from the people(present then), who, I think, was Khalid bin Al-Walid, asked forpermission to kill him, but the Prophet prevented him. When the manwent away, the Prophet said, "Out of the offspring of this man, therewill be people who will recite the Quran but it will not go beyond theirthroats, and they will go out of Islam as an arrow goes out through thegame, and they will kill the Muslims and leave the idolators. Should Ilive till they appear, I would kill them as the Killing of the nation of Ad."Hadith # 10Bukhari Book 93 Hadith 651Narrated Abu Said Al-Khudri:The Prophet said, "There will emerge from the East (najd) some
  • people who will recite the Quran but it will not exceed their throatsand who will go out of (renounce) the religion (Islam) as an arrowpasses through the game, and they will never come back to it unlessthe arrow, comes back to the middle of the bow (by itself) (i.e.,impossible). The people asked, "What will their signs be?" He said,"Their sign will be the habit of shaving (of their beards). (Fateh Al-Bari,Page 322, Vol. 17th)Hadith # 11Muslim Book 5 Hadith 2316Jabir b. Abdullah reported that a person came to the Messenger ofAllah (may peace be upon him) at Jirana on his way back from Hunain,and there was in the clothes of Bilal some silver. The Messenger ofAllah (may peace be upon him) took a handful out of that andbestowed it upon the people. He (the person who had met the Prophetat Jirana) said to him: Muhammad, do justice. He (the Holy Prophet)said: Woe be upon thee, who would do justice if I do not do justice, andyou would be very unfortunate and a loser if I do not do justice. Uponthis Umar b. Khattab (Allah be pleased with him) said: Permit me to killthis hypocrite. Upon this he (the Holy Prophet) said: May there beprotection of Allah! People would say that I kill my companions. Thisman and his companions would recite the Quran but it would not gobeyond their throat, and they swerve from it just as the arrow goesthrough the prey.
  • Hadith # 12Muslim Book 5 Hadith 2318Abu Said Khudri reported that Ali (Allah be pleased with him) sentsome gold alloyed with dust to the Messenger of Allah (may peace beupon him), and the Messenger of Allah (may peace be upon him)distributed that among four men, al-Aqra b. Habis Hanzali and Uyainab. Badr al-Fazari and Alqama b. Ulatha al-Amiri, then to one person ofthe tribe of Kilab and to Zaid al-Khair al-Tal, and then to one person ofthe tribe of Nabhan. Upon this the people of Quraish felt angry andsaid: He (the Holy Prophet) gave to the chiefs of Najd and ignored us.Upon this the Messenger of Allah (may peace be upon him) said: I havedone it with a view to con- cillating them. Then there came a personwith thick beard, prominent cheeks, deep sunken eyes and protrudingforehead and shaven head. He said: Muhammad, fear Allah. Upon thisthe Messenger of Allah (may peace be upon him) said: If I disobey Allah,who would then obey Him? Have I not been (sent as the) mosttrustworthy among the people of the-world? -but you do not reposetrust in me. That person then went back. A person among the peoplethen sought permission (from the Holy Prophet) for his murder.According to some, it was Khalid b. Walid who sought the permission.Upon this the Messenger of Allah (may peace be upon him), said: Fromthis very persons posterity there would arise people who would recitethe Quran, but it would not go beyond their throat; they would kill thefollowers of Islam and would spare the idol-worshippers. They wouldglance through the teachings of Islam so hurriedly just as the arrowpasses through the pray. If I were to ever find them I would kill them
  • like Ad.Hadith # 13Muslim :: Book 5 : Hadith 2319Abu Said al-Khudri reported: Ali b. Abu Talib sent to the Messenger ofAllah (may peace be upon him) from Yemen some gold alloyed withclay in a leather bag dyed in the leaves of Mimosa flava. He distributedit among four men. Uyaina b. Hisna, Aqra b. Habis and Zaid al-Khail,and the fourth one was either Alqama b. Ulatha or Amir b. Tufail. Aperson from among his (Prophets) Companions said: We had a betterclaim to this (wealth) than these (persons). This (remark) reached theApostle of Allah (may peace be upon him) upon which he said: Will younot trust me, whereas I am a trustee of Him Who is in the heaven? Thenews come to me from the heaven morning and evening. Then therestood up a person with deep snnken eyes, prominent cheek bones, andelevated forehead, thick beard, shaven head, tucked up loin cloth, andhe said: Messenger of Allah, fear Allah. He (the Holy Prophet) said: Woeto thee. do I not deserve most to fear Allah amongst the people of theearth? That man then returned. Khalid b. Walid then said: Messenger ofAllah, should I not strike his neck? Upon this he (the Holy Prophet) said:Perhaps he may be observing the prayer. Khalid said: How manyobservers of prayer are there who profess with their tongue what is notin their heart? Upon this the Messenger of Allah (may peace be uponhim) said: I have not been commanded to pierce through the hearts ofpeople, nor to split their bellies (insides). He again looked at him and he
  • was going back. Upon this he (the Holy Prophet) said: There would arisea people from the progeny of this (man) who would recite the Quranglibly, but it would not go beyond their throats; they would (hurriedly)pass through (the teachings of their) religion just as the arrow passesthrough the prey. I conceive that he (the Holy Prophet) also said this: IfI find them I would certainly kill them as were killed the (people of)Thamud.Hadith # 14Muslim Book 5 Hadith 2322Abu Salama and Ata b. Yasar came to Abu Said al-Khudri and askedhim about Haruriya, saying: Did you hear the Messenger of Allah (maypeace be upon him) making a mention of them? He (Abu Said al-Khudri) said: I dont know who the Haruriya are, but I heard theMessenger of Allah (may peace be upon him) as saying: There wouldarise in this nation (and he did not say" out of them" ) a people and youwould hold insignificant your prayers as compared with their prayers.And they would recite the Quran which would not go beyond theirthroats and would swerve through the religion (as blank) just as a(swift) arrow passes through the prey. The archer looks at his arrow, atits iron head and glances at its end (which he held) in the tip of hisfingers to see whether it had any stain of blood.Hadith # 15
  • How khawarijis Quote Idol,/kafir versesfor Believers‫وكان ابن عمر يراهم شرار خلق ا وقال إنهم انطلقوا إلى آيات نزلت في‬‫الكفار فجعلوها على المؤمنين‬"Ibn Umar considered the Khawarij and the heretics as the worst beingsin creation, and he said: They went to verses which were revealedabout the disbelievers and applied them to the Believers.Bukhari Chapter KhawarjitesIbn Hajr al Asqalani (rah) said in Fath ul bARI: ‫ قلت : وسنده صحيح‬Thatits sanad is sahih
  • ‫اللھم انی اسا لک و اتوجہ الیک بمحمد نبی الرحمۃ‬ ‫یا محمد انی قد توجھت بک الی ربی فی حاجتی‬ ‫ھذہ لتقضی اللھم فشفعہ فی ۔‬ ‫ابن ماجہ،ترمذی،احمد ،حاکم ،امام بہیقی،امام نسائی۔‬ ‫وھابیت/دیوبندیت :مسلمان علماء کی نظر میں‬ ‫بِسمِ اِ الرّ حمٰنِ الرّ حِیِم‬ ‫“ واذ اقیل لھم اتبعو اما انزل ا، قالو ا: بل نتّبع ما وجدنا‬ ‫علیہ آبائنا،،‬ ‫“لقد کنتم انتم وآباو کم فی ضلل مبین ،، ( القر آن الحکیم(‬ ‫“ اور جب ان سے کھا گیا کہ خدا نے جو )دین ( نازل کیا ھے‬ ‫اس کی پیروی کرو ) تو ( اُن لوگوں نے جواب دیا کہ‬ ‫) نھیں ( بلکہ ھم اس ) دین ( کی پےروی کر تے ھیں جس‬ ‫پر ھم نے اپنے بزرگوں کو پایا ھے ،، “ یقینا تم لوگ کھلی‬ ‫ھوئی گمراھی میں ھو اور تمھارے بزرگ بھی کھلی‬ ‫ھوئی گمراھی میں تھے ،، )قرآن کریم )‬
  • ‫مسلمان بھائیوں‬ ‫کیا آپ وھابیت کی حقیقت سے آگاہ ھیں ؟‬ ‫اور کیا آپ جانتے ھیں کہ وھابی مسلک کو محمد ابن‬‫عبدالوھاب نجدی متوفی ۶۰ ۲۱ئہ نے ایجاد کیا ھے ۔ اور اس‬ ‫نے اپنے تمام اصول احمد ابن تیمیہ حرانی کے افکار سے‬ ‫حاصل کئے ھیں ۔؟‬‫اور کیا آپ یہ بھی جانتے ھیں کہ یہ مذ ھب مسلمانوں کے‬ ‫چاروں مذاھب کے خلف ھے ؟‬‫اور کیا اس سے بھی با خبر ھیں کہ چاروں مذاھب وھابی‬‫مسلک کے قائدین اور اس کے پیرو کاروں کو گمراہ اور راہ‬ ‫ایمان سے خارج بتاتے ھیں ؟‬ ‫خدا وند عالم نے فرمایا :‬‫“ومن یشاقق الرّسول من بعد ما تبیّن لہ الھدی ویتبع غیر‬ ‫ٰ‬ ‫سبیل المو منین نولّہ ماتولّیٰ ، ونصلہ جھنّم وسائت‬ ‫مصیرا۔ ،، صدق ا العظیم‬‫“ اور جو شخص راہ ھدایت روشن ھو جانے کے بعد رسول‬‫خدا کی مخالفت کرے اور اھل ایمان کے راستہ کو چھوڑ کر‬
  • ‫دوسرا راستہ اختیار کرے تو ھم اسے اس کے باطل راستہ پر‬ ‫چھوڑ دیں گے اور جھنم میں جلئیں گے اور یہ کتنا برا‬ ‫ٹھکانا ھے ،،۔‬‫اور کیا آپ لوگ جانتے ھیں کہ ھمارے اھل سنّت علماء کی‬ ‫ایک بڑی جماعت نے آپس میں اختلف مذاھب کے با وجود‬ ‫وھابی مسلک کے مو جد اور اس کے استاد اور امام ، ابن‬‫تیمیہ کی رد میں بھت سی کتابیں لکھی ھیں ۔اور وھابی‬ ‫مسلک کو باطل قرار دیا ھے ۔؟‬ ‫محمد ابن عبدالوھاب نجدی اور اس کے عقائد‬‫کیا آپ جانتے ھیں ؟کہ علماء مکہ نے محمد ابن عبد الوھاب‬ ‫کے ملحد ھو نے کا فتویٰ دیا ھے اور اسے خبیث ،بے شرم ،بے‬‫بصیرت اور گمراہ بتایا ھے۔ اور بتایا ھے کہ یہ شخص جھوٹا‬‫تھا ،قرآن و حدیث کے معنی میں تحریف کیا کرتا تھا خدا پر‬ ‫بھتان باندھتا تھااور قرآن کا منکر تھا اُنھوں نے اس پر‬ ‫بارھا لعنت کی ھے ۔‬ ‫ھاں!یہ تمام باتیں حق کے حامی شاہ فضل رسول قادری‬‫نے اپنی کتاب “سیف الجبار المسلوک علی اعداء البرار ،،میں‬ ‫ٰ‬ ‫لکھی ھے ۔یہ کتاب ۹۷۹۱ءء میں ایک غیرت مند مسلمان‬
  • ‫حسین حلمی استانبولی نے تر کیہ میں شائع کی تھی ۔‬ ‫عراق کی ایک مسلّم ومتفق علیہ عظیم علمی شخصیت‬ ‫شیخ جمیل آفندی زھاوی نے اپنی کتاب “الفجر الصادق ،،‬ ‫میں صفحھ،۷۱پر محمد ابن عبدالوھاب کے حالت مینتحریر‬‫فرمایا ھے :یہ محمد ابن عبد الوھاب شروع میں ایک طالب‬‫علم تھا ،،علماء سے علم حاصل کرنے کی خاطر مکہ ،مدینہ‬ ‫آتا جاتا رھتا تھا۔مدینہ مینجن علماء سے اس نے تحصیل‬ ‫علم کیاوہ یہ ھیں :شیخ محمد ابن سلیمان کردی ،شیخ‬ ‫محمد حیاةسندی ،یہ دونوں استاد اور دوسرے جن علماء‬ ‫سے یہ پڑھتا تھا،وہ حضرات اس کے اندر گمراھی و الحاد‬‫کو بھانپ گئے تھے اور کھتے تھے کہ خدا عنقریب اسے گمراہ‬ ‫کرے گا اور اس کے ذریعہ دوسرے بدنصیب بندے بھی گمراہ‬‫ھونگے چنانچہ ایسا ھی ھوا۔اور اسکے باپ عبد الوھاب جو‬ ‫علماء صالحین میں تھے،انھوننے بھی اس کی بے دینی کا‬ ‫اندازہ لگا لیا تھا اور لوگونکو اس سے دور رھنے کا حکم‬ ‫دیتے تھے۔اسی طرح اس کے بھائی شیخ سلیمان بھی اس‬ ‫کے خلف تھے بلکہ انھوں نے تو محمدابن عبدالوھاب کی‬ ‫ایجاد کردہ بدعتوں اور منحرف عقیدوں کی رد میں ایک‬
  • ‫کتاب بھی لکھی ۔وہ اسی کتاب کے صفحھ ۸۱میں لکھتے‬‫ھیں کہ اس)محمد ابن عبدالوھاب (پر خدا کی لعنت ھو یہ‬ ‫اکثر پیغمبر اسلم کی مختلف الفاظ میں توھین کرتا تھا ،ً‬ ‫آپ کو پیغمبر کے بجائے “طارش،،کھتا تھا جس کا مطلب‬ ‫عوام کی زبان میں وہ شخص ھے جسے کوئی کسی کے‬‫پاس بھیجے۔ حالنکہ عوام بھی صاحب عزت وقابل احترام‬‫شخصیت کے لئے یہ کلمہ نھیں استعمال کرتے ۔یھاں تک کہ‬‫اس کے بعض پیرو پیغمبر کی شان میں کھتے ھیں :“میرا یہ‬ ‫عصا محمد سے بھتر ھے ۔کیونکہ میں اس سے کام لیتا‬ ‫ھوناور محمد مر گئے ھیں۔اب ان سے کوئی فائدہ حاصل‬ ‫نھیں ھوسکتا۔ محمد ابن عبد الوھاب یہ سب سن کر‬ ‫خاموش رھتا تھا اور اپنی رضا ظاھر کرتا تھا آپ جانتے‬ ‫ھیں یہ بات مذاھب اربعہ میں کفر مانی جاتی ھے۔‬‫اسی طرح یہ پیغمبر اسلم پر درود بھیجنے کو برا سمجھتا‬ ‫اور شب جمعہ میں رسول ا صلی ا علیہ و آلہ و سلّم‬ ‫پر درود پڑھنے سے روکتا تھا ۔منبروں پر بلند آواز سے درود‬ ‫پڑھنے سے منع کرتا اور اگر کوئی شخص ایسا کر تا تو اسے‬ ‫سخت سزا دیتا تھا یھاں تک اس نے ایک نابینا موذن‬
  • ‫کواسی بات پر قتل کردیا تھا کہ اسے اذان کے بعد درود‬ ‫پڑھنے سے منع کیا تھا لیکن وہ باز نھیں آیا تھا ۔‬‫آپ کو جان کر بھی حیرت ھوگی اسماعیل پاشا بغدادی نے‬ ‫“ھدیةالعا رفین ،،میں جو پھلے استانبول ،ترکیہ میں‬ ‫۱۵۹۱ئئمیں طبع ھوئی پھر دوبارہ بیروت میں ۲۰۴۱ھئمیں‬ ‫آفسیٹ سے طبع ھوئی ،کی ج ۲صفحہ ۰۵۳پرذکر کیا ھے‬ ‫:محمد ابن عبدالوھاب نے ایک کتاب ان مسائل سے متعلق‬‫لکھی ھے جس میں اس نے پیغمبر کی مخالفت کی تھی ،‬ ‫اور پیغمبر کی مخالفت کا مطلب آپ سے دشمنی کرنا ھے‬ ‫جس کے متعلق خدا نے فرمایا ھے :“ومن یشاقق الرّسول‬ ‫من بعد ما تبیّن لہ الھدیٰ ویتبع غیر سبیل المو منین نولّہ‬ ‫ماتولّی ، ونصلہ جھنّم وسائت مصیرا۔‬ ‫ٰ‬ ‫جوراہ ھدایت روشن ھوجانے کے بعد پیغمبرکی مخالفت‬ ‫کرے اس کا ٹھکانا جھنّم ھے۔‬ ‫محمد ابن عبدالوھاب کی رد میں لکھی گئی کتابیں‬ ‫قارئین کرام جانتے ھیں کہ شیخ سلیمان ابن عبدالوھاب ،‬ ‫محمد ابن عبدالوھاب کے حقیقی بھائی نے سب سے پھلے‬‫اس بد عت ایجاد کرنے والے کی رد میں کتاب لکھی جس کا‬
  • ‫نام “ فصل الخطاب فی الرد علی محمد ابن عبدالوھاب ،،‬ ‫ٰ‬ ‫رکھا تھا ۔ اس کا اسماعیل پاشا نے “ ایضاح المکنون ج ۲‬ ‫ص ۰۹۱ طبع بیروت دار الفکر ۲۰۴۱ ئ‬ ‫اور عمر رضا کحالہ نے “ معجم المو لفین ،، ج ۴ ص ۹۶۲‬ ‫طبع بیروت “ دارا حیاء الترات العربی ،، میں ذکر کیا ھے‬‫اور محمد ابن عبدالوھاب کی رد میں لکھنے والوں میں سے‬ ‫ایک شیخ عبدا بن عیسی صغانی ھیں ۔ انھوں نے جو‬ ‫ٰ‬ ‫کتاب لکھی اس کا نام “ السیف الھندی فی ابانة‬‫طریقةالشیخ النجدی ،، ھے۔ اس کا ذکر بھی اسماعیل پاشا‬ ‫نے “ ھدیة العارفین ،، ج ۱ ص ۸۸۴ میں کیا ھے‬ ‫اس کی رد میں لکھنے والوں میں سے ایک سید علوی ابن‬ ‫حداد بھی ھیں جنھوں نے کتاب “مصباح النام ،،و “جلء‬‫الظلم فی رد شبہ البدعی النجدی التی اضلّ بھا العوام،،یہ‬ ‫کتاب مطبع عامر کے توسط سے ۵۲۳۱ھئمیں طبع ھوئی ۔‬ ‫اس کا ابو حامد ابن مرزوق نے اپنی کتاب “التوسل بالنبی‬ ‫وبالصالحین ،،مینکیا ھے۔ یہ کتاب بھی ابن عبد الوھاب کے‬ ‫عقائد کی رد میں لکھی گئی ھے ۔موصوف نے ایک اور‬ ‫کتاب بھی بنام “السیف الباتر لعنق المنکر علی الکابر ،،‬
  • ‫لکھی ھے اس کا ذکر بھی کتاب “التوسل بالنبی‬ ‫وبالصالحین ،،صفحھ ۰۵۲پر ھے ۔‬‫محمد ابن عبد الوھاب کی رد میں لکھنے والوں مینسے ایک‬ ‫احمد ابن علی البصری ھیں جو قبائی کے نام سے‬ ‫مشھورتھے۔ انھوں نے اس کے ایک رسالہ کی رد میں‬ ‫“فصل الخطاب فی رد ضل لت ابن عبد الوھاب ،،کے نام‬ ‫سے ایک کتاب لکھی ھے۔ اس کا تذکرہ بھی ابو حامد‬‫مرزوق نے“ التوسل بالنبی وبالصالحین،،میں صفحھ ۰۵۲پرکیا‬ ‫ھے اور اسماعیل پاشا بغدادی نے “ایضاح المکنون،،میں ج‬ ‫۲صفحھ ۰۹۱پراس کتاب کا نام “فصل الخطاب،، ذکر کیا‬ ‫ھے۔‬ ‫محمد ابن عبد الوھاب کی رد میں لکھنے والوں میں سے‬‫ایک بزر گوار سید احمد ابن زینی دحلن ،مفتی مکہ مکرّمہ‬ ‫بھی ھیں۔ انھوں نے “فتوحات اسلمیھ،،کی ج ۲طبع مصر‬ ‫۴۵۳۱ھئمطبع مصطفی محمد میں اس کی رد کی ھے‬ ‫اوراس پر طعن کیا ھے )صفحھ ۱۵۲سے ۹۶۲تک دیکھئے (‬‫مر حوم زینی دحلن نے لکھا ھے کہ محمد ابن عبد الوھاب‬‫کی رد میں بھت سی کتابیں اوررسالے لکھے گئے ھیں لیکن‬
  • ‫موصوف نے ان کتابوں کے نام نھیں ذکر کئے ۔‬‫شیخ یوسف نبھانی نے بھی اس کی رد میں “شواھدالحق‬ ‫فی التوسل بسید الخلق،،کے نام سے ایک کتاب لکھی ھے‬‫جوایک جلد میں طبع ھوئی ھے ۔اس کا ذکر بھی “التوسل‬ ‫بالنبی وبالصالحین،،صفحھ ۲۵۲پر ھے۔ اس کتاب کے ص‬ ‫۱۵۱پر سید احمد ابن دحلن کی کتاب “خلصةالکلم فی‬ ‫امراء البلد الحرام ،،سے نقل ھے۔‬ ‫ان شبھات کا ذکر جن سے وھابیت نے تمسک کیا‬‫مناسب یہ ھے کہ پھلے ان شبھات کا ذکر کرینجن سے محمد‬‫ابن عبد الوھاب نے لوگوں کو گمراہ کرنے کی خاطر تمسک‬ ‫کیا۔‬ ‫پھر ان کی رد پیش کریں گے اور یہ بیان کریں گے کہ جن‬ ‫باتوں کو اس نے دلیل بنایا ھے وہ سب جھوٹ ،افتراء اور‬ ‫عوام فریبی ھے ۔‬ ‫پھر “شواھد الحق،،کے ص ۶۷۱میں لکھاھے۔‬ ‫محمد ابن عبدالوھاب کے پاس اس کے استاد کردی کا خط‬‫محمد ابن عبدالوھاب کی رد کر نے والوں میں سے ایک اس‬
  • ‫کے استاد شیخ محمد ابن سلیمان کردی شافعی ھیں انھوں‬‫نے منجملہ ان باتوں کے جو خط میں اس کی رد کرتے ھوئے‬ ‫لکھا تھا یہ باتیں بھی لکھی تھیں :‬‫عبدالوھاب کے بیٹے !سلم ھو اس پر جس نے راہ راست کی‬ ‫پیروی کی، میں تمھیں ا کے لئے نصیحت کرتا ھوں کہ‬ ‫اپنی زبان کو مسلمانوں کی ایذا رسانی سے باز رکھو !‬ ‫چنانچہ اگر کسی شخص کے بارے میں سنو کہ وہ غیر خدا‬ ‫جس سے مدد مانگی جائے اس کے موثر ھونے کا عقیدہ‬ ‫رکھتا ھے تو اسے حق پھچنواو اور دلیل پیش کرو کہ غیر‬‫خدا میں تاثیر نھیں ھے ۔ اب اگر وہ انکار کرے تو صرف اسے‬ ‫کافر قرار دو ۔ تمھیں مسلمانوں کے سواد اعظم کو کافر‬‫قرار دینے کا کوئی حق نھیں ھے جبکہ تم خود سواد اعظم‬ ‫سے منحرف ھو اور جو شخص سواد اعظم سے منحرف‬ ‫ھو اس طرف کفر کی نسبت دینا زیادہ مناسب ھے ،کیوں‬‫کہ اس نے اھل ایمان کے راستہ کو چھوڑ کر دوسرے راستہ‬ ‫کی پیروی کی ھے خدا وند عالم نے فرمایا ھے :‬ ‫“ ومن یشاقق الرّسول من بعد ما تبیّن لہ الھدی ویتّبع غیر‬ ‫سبیل المو منین نولّہ ما تولّیٰ و نصلّہ جھنّم و سائت‬ ‫ّ‬
  • ‫مصیرا ،،‬ ‫“ کہ جو شخص راہ ھدایت روشن ھو جانے کے بعد رسول‬ ‫کی مخالفت کرے اور اھل ایمان کے راستہ کو چھوڑ کر‬ ‫دوسرے راستہ کی پیروی کرے تو ھم اسے اس کے باطل‬ ‫راستہ پر چھوڑ دیں گے اور اسے جھنم میں جلئیں گے اور‬‫یہ برا ٹھکانا ھوگا ،، اور بھیڑ یا گلہ سے الگ ھو جانے والی‬ ‫بکری کو ھی کھاتا ھے ۔ انتھیٰ۔‬ ‫اس کے بعد لکھتے ھیں کہ : مذا ھب اربعہ میں سے جن‬ ‫لوگوں نے اس کی رد کی ھے ۔ خواہ مشرق کے رھنے والے‬ ‫ھوں یا مغرب کے ، بے شمار ھیں ۔ کسی نے مبسوط کتاب‬‫کی صورت میں رد لکھی اور کسی نے مختصر اور بعض نے‬ ‫صرف امام احمد ابن جنبل کے نصوص سے اس کی رد کی‬ ‫ھے تاکہ یہ واضح ھو جائے کہ وہ جھوٹا ھے ، اپنے کو امام‬ ‫احمد بن جنبل کے مذ ھب کی طرف نسبت دینے میں فریب‬‫دھی سے کام لے رھا ھے اور اپنے کلم کو اس طرح تمام کیا‬‫ھے کھ“ھم نے جو کچہ ذکر کیا اس سے وہ تمام باتیں باطل‬‫ھو جاتی ھیں جو محمد ابن عبدالوھاب نے گڑھی ھیں اور‬ ‫جن کے ذریعہ مومنین کو دھوکہ دے رھا ھے اور خود اس‬
  • ‫نے اور اس کے پیرووننے ان کی جان ومال کو مباح قرار دے‬ ‫رکھا ھے ،،۔ )خلصہ کلم سید احمد دحلن (‬ ‫کچہ اور افراد جنھوں نے اس کی رد میں کتابیں لکھیں‬ ‫محمد ابن عبدالوھاب کی رد میں لکھنے والوں میں شیخ‬‫عطاء مکی بھی ھیں ، انھوں نے “ انصار الھند ی فی عنق‬ ‫النجدی ،، نام کی کتاب لکھی ۔ اس کا تذ کرہ “ التوصل‬ ‫بالنبی و بالصا لحین ،، مینص ۰۵۲ پر ھے ۔‬‫اسی طرح اس کی رد میں لکھنے والوں میں بیت المقدس‬ ‫کے ایک عالم ھیں جنھوں نے “ السیوف الصقال فی اعناق‬‫من انکر علی الو لیا ، بعد ال نتقال ،، لکھی اس کا تذ کرہ‬ ‫بھی “التوسل بالنّبی و با لصالحین ،،میں ص ۰۵۲ پر ھے ۔‬‫ایک اور بزرگ شیخ ابراھیم حلمی قادری اسکندری نے بھی‬ ‫اس کی رد کی ھے ، انھوں نے جو کتاب لکھی ھے اس کا‬ ‫نام “ جلل الحق فی کشف احوال اشرار لخلق ،، ھے۔ یہ‬ ‫کتاب اسکندریہ میں ۵۵ ۳۱ء ہ میں طبع ھوئی ھے اس کا‬ ‫تذ کرہ “ التوسل بالنبی وبالصالحین ،،میں ص ۳۵۲ پر ھے ۔‬‫شیخ مالکی جزائری نے بھی اس کی رد کی ھے۔ انھوں نے‬‫“ اظھار العقوب ممن منع التو سلّ با لنّبی والو لی الصدوق‬
  • ‫،، نام کی کتاب لکھی ھے۔ اسے صاحب کتاب “ التوسلّ با‬‫لنّبی و با لصالحین ،، نے ص ۲۵۲ پر ذکر کیا ھے ۔شیخ عفیف‬ ‫الدین عبدا ابن داود جنبلی نے بھی اس کی رد میں “‬ ‫الصّواعق والر عود ،، نام کی کتاب لکھی۔ اس کا ذکر “‬ ‫التوسلّ با لنّبی و با لصالحین ،، کے ص ۹۴۲ پر ھے اور سید‬‫علوی ابن احمد حداد کا قول نقل کیا ھے کہ ‘ بصرہ ، بغداد‬ ‫، حلب ، اور احساء کے بزرگ علماء نے بھی اس کتاب کی‬ ‫تائید کی ھے اور اپنی تفریظوں میں بھی اس کی تعریف‬‫کی ھے ۔اور اس کی رد لکھنے والوں میں ایک شیخ عبدا‬ ‫ابن عبد اللطیف شافعی ھیں ۔ انھوں نے “ تجرید الجھاد‬ ‫لمدی ال جتھاد ،، ص ۹۴۲ پر ھے ۔‬‫اس کی رد کرنے والوں میں شیخ محقق محمد ابن الرحمن‬‫بن عفالق الحنبلی ھیں انھوں نے کتاب تحکم المقلدین بمن‬‫ادّعی تجدید الدین ،،لکھی ۔اس کا ذکر“ التوسل با لنّبی و با‬ ‫ّ‬‫لصالحین،،می نص ۹۴۲پرھے اور یہ بھی ذکر ھے کہ انھوں‬‫نے ھر اس مسئلہ کی جسے محمد ابن عبد الوھاب نے گڑھا‬ ‫ھے خوب رد کی ھے۔‬ ‫اسی طرح طائف کے ایک عالم شیخ عبد ا ابن ابراھیم‬
  • ‫میر غینی ھیں انھوں نے “تحریض الغبیاء علی الستغاثہ‬ ‫بالنبیاء والولیاء ،،نامی کتاب لکھی ھے اس کا ذکر“‬ ‫التوسلّ با لنّبی و با لصالحین،،مینصفحھ ۰۵۲ پرھے ۔‬‫شیخ طاھر سنبل حنفی انھوننے “النقصار للولیاء البرار ،،‬ ‫نام کی کتاب لکھی اس کا ذکر “ التوسل با لنّبی و با‬ ‫ّ‬ ‫لصالحین،،مینصفحھ ۰۵۲ پرھے ۔‬ ‫شیخ مصطفی حمامی مصری نے بھی اس کی رد میں‬‫“غوث العباد ببیان الرشاد ،،نام کی کتاب لکھی جو طبع ھو‬ ‫چکی ھے اس کا ذکر“ التوسلّ با لنّبی و با لصالحین،،‬ ‫مینصفحھ ۳۵۲ پرھے ۔‬ ‫اس کی رد لکھنے والوں میں علمہ محقق شیخ صالح‬ ‫کواشی تونسی بھی ھینانھوں نے اس کی ردمیں “رسالہ‬ ‫مسجعہ محکمة،،لکھا اس کا ذکر “ التوسل با لنّبی و با‬ ‫ّ‬ ‫لصالحین،،مینصفحھ ۱۵۲ پرھے اور لکھا ھے کہ علمہ‬ ‫موصوف نے اس رسالہ کے ذریعہ ابن عبدالوھاب کے ایک‬ ‫رسالہ کی رد کی ھے ۔علمہ مذکور کا یہ رسالہ “سعادة‬‫الدار ین فی الرد علی الفریقین ،،کے ضمن میں طبع ھواھے‬ ‫نیز اس کی رد تونس کے شیخ السلم اسماعیل تمیمی‬
  • ‫مالکی نے بھی لکھی ھے ۔انھوں نے رد علی محمد ابن‬ ‫عبدالوھاب کے نام سے ایک کتاب لکھی جس کا ذکر “‬‫التوسلّ با لنّبی و با لصالحین،،صفحھ ۱۵۲ پرھے اور اس کے‬ ‫ساتھ ساتھ یہ بھی ذکر کیا ھے کہ مذکورہ کتاب کافی‬ ‫محققانہ اور ٹھوس ھے اس کے ذریعہ ابن عبدالوھاب کے‬ ‫ایک رسالہ کی ردکی گئی ھے یہ کتاب تونس میں شائع‬ ‫ھوئی ھے ۔‬‫علمہ مفتی فاس الشیخ مھدی وزّانی نے بھی اس کی رد‬‫کی ھے انھوں نے جواز توسل کے بارے میں ایک رسالہ لکھا‬‫ھے،اس کاذکر“ التوسل با لنّبی و با لصالحین،،مینصفحھ ۲۵۲‬ ‫ّ‬ ‫پرھے ۔‬‫اور ابو حامد ابن مرزوق نے “ التوسلّ با لنّبی و با لصالحین،،‬ ‫کے صفحھ ۱ پرذکر کیا ھے جس کے الفاظ یہ ھیں:ائمہ‬ ‫اربعہ کے بعض پیرووں نے اس کی اور اس کے مقلدین کی‬ ‫بھت سی عمدہ تالیفات کے ذریعہ ردکی ھے۔‬ ‫اور حنبلوں میں اس کی رد کرنے والوں مینسے اس کے‬ ‫بھائی سلیمان ابن عبدالوھاب ھیں اور شام کے حنبلیوں‬ ‫میں سے آل شطیٰ اور شیخ عبداللهقدومی نابلسی ھیں‬
  • ‫جنھوں نے اپنے سفرنامہ میں اس کی رد لکھی اوریہ سب‬ ‫کتابیں“زیارةالنبّی صلی ا تعالی علیہ وسلم والتوسل بہ‬ ‫وبالصا لحین من امتھ،،کے حاشیہ پر شائع ھوئی ھیں اور‬ ‫کھا کہ محمد ابن عبدالوھاب اپنے مقلدین سمیت خوارج‬‫میں سے ھے ۔ جن لوگوں نے اس مطلب پہ نص کی ھے ان‬ ‫میں سے علمہ محقق سیّد محمد امین بن عابدین بھی‬‫ھیں جنھوں نے اپنے حاشیہ “ ردالمختار علیٰ الدر المختار ،،‬ ‫میں باغیوں کے باب میں اور شیخ صاوی مصری نے جللین‬ ‫کے حاشیہ میں صریحا لکھا ھے کہ یہ اور اس کے مقلدین‬‫خوارج میں سے ھیں کیوں کہ یہ “ لالہ ال اللہ محمدرسول‬ ‫ّ‬‫اللہ ،،کھنے والوں کو اپنی رائے سے کافر کھتے ھیں اور اس‬ ‫میں کوئی شک نھیں ھے کہ مسلمانوں کو کافر کھنا‬ ‫خوارج اور دوسرے بدعت کاروں کی علمت ھے جو اھل‬ ‫قبلہ میں سے اپنے مخالفین کو کافر قرار دیتے ھیں ۔‬ ‫محمد ابن عبدالوھاب اور اس کے ماننے والوں کی بنیادی‬‫عقائد فقط چار ھیں ۔ خدا وند عالم کو اس کی مخلوق کے‬‫مشابہ قرار دینا ، الوھابیت اور ربوبیت دونوں کی توحید کو‬ ‫ایک ماننا ، نبی صلی ا علیہ وآلہ وسلّم ،کی عزت نہ‬ ‫ٰ‬
  • ‫کرنا ، اور مسلمانوں کو کافر قرار دینا ، اور یہ ان تمام‬ ‫عقائد میں احمد ابن تیمیہ کا مقلد ھے اور احمد ابن تیمیہ‬‫پھلے عقیدہ میں کرامیہ اور مجسمیہ جنبلیہ ) جو خدا کے لئے‬‫ھاتہ پاوں وغیرہ اعضائے جسم کے قائل ھیں ( کا مقلّد ھے‬ ‫اور چوتھے عقیدہ میں ان دونوں فرقوں اور فرقئہ خوارج‬ ‫کا پیرو ھے ۔‬ ‫اور وھابیوں کے نزدیک نقل دین کے سلسلہ میں بھی ثقہ‬‫اور قابل اعتماد افراد ابن تیمیھ، اس کے شاگرد ابن قیم اور‬ ‫محمد ابن عبدالوھاب ھی ھیں ۔ چنانچہ علماء مسلمین‬ ‫میں سے کسی عالم پر وہ اعتماد نھیں کرتے اور اس کی‬ ‫کوئی قدر نھیں جانتے جب تک کہ اس کے کلم میں کوئی‬ ‫ایسا شبہ نہ پایا جاتا ھو جو ان کی رائے اور خواھش کی‬ ‫تائید کرے چنانچہ یہ وسیع دین اسلم ان کے نزدیک تین‬ ‫مذکورہ بال افراد میں محصور ھے ۔نیز کتاب التوسل النبّی‬ ‫ص ۹۴۲ پراس عنوان کے تحت “محمد ابن عبدالوھاب کی‬‫رد کر نے والے علماء خواہ اس کے ھم عصر ھوں یا اس کے‬ ‫بعد میں آنے والے ان کی ایک جماعت کا تذکرہ کیا ھے جن‬ ‫مینمندرجہ ذیل نام گنائے ھیں :علمہ عبدالوھاب ابن احمد‬
  • ‫برکات شافعی احمدی مکّی ،علمہ سید منعمی ،جب محمد‬‫ابن عبدالوھاب نے ایک ایسی جماعت کو جنھوں نے اپنے سر‬ ‫نھیں منڈائے تھے قتل کردیا تو موصوف نے ایک قصیدہ کے‬ ‫ذریعہ اس کی رد کی تھی ۔‬‫علمہ سید عبدالرحمن جو احساء کے بزرگ ترین علماء میں‬ ‫سے ھیں ،انھوں نے ایک زور دار قصیدہ کے ذریعہ اس کی‬ ‫رد کی اس قصیدہ میں سرسٹہ )۷۶(اشعار ھینجس کا‬ ‫مطلع یہ ھے :‬ ‫بدت فتنة اللیل قدغطّت الفق وشاعت فکادت تبلغ الغرب‬ ‫والشرقا‬ ‫)فتنہ شب ظاھر ھوا جس نے افق کو اپنی لپیٹ میں لے‬ ‫لیااور پھیلتو مغرب اور مشرق تک پھونچ گیا۔(‬ ‫شیخ عبد ا ابن عیسیٰ مویسی ،شیخ احمد مصری‬ ‫احسائی ،شیخ محمد ابن شیخ احمد ابن عبد الطیف‬ ‫احسائی اور ص ۵۰۱پر اس عنوان کے تحت کھ“ محمد ابن‬ ‫عبدالوھاب پیغمبر پر درود بھیجنے سے منع کرتا تھا ،،لکھا‬ ‫ھے جس کے الفاظ یہ ھیں اور “صاحب کتاب “مصباح النام‬ ‫وجلء الظلم فی رد شبہ البدعی النجدی التی اضل بِھَا‬ ‫ّ‬
  • ‫العَوام ،،سید علوی ابن احمد ابن حسین ابن سید عارف‬ ‫ْ‬ ‫بالله عبد ا ابن علوی حداد نے اپنی کتاب میں اس کا‬ ‫ذکرکیا ھے ،پھرسید احمد بن زینی دحلن نے اپنے رسالہ‬‫“الدررالسنیةفی الرد علی الوھابیة،،میں لکھا ھے کہ محمد‬ ‫ابن عبدالوھاب پیغمبراسلم صلی ا علیہ وآلہ وسلم‬ ‫پرصلوات پڑھنے سے روکتا تھا اور منبروں پر بلند آواز سے‬ ‫صلوات پڑھنے کو روکتا تھا اور ایسا کرنے والے کو اذیّت اور‬ ‫سخت سزا دیتا تھا حتی کہ اس نے ایک نابینا کو جو ایک‬‫صالح اور خوش آوازموذن تھا قتل کردیا ۔اسے اذان کے بعد‬ ‫منارہ پر صلوات پڑھنے سے روکا تھا لیکن وہ باز نھیں آیا‬ ‫نتیجہ میناسے جان سے مار ڈال اور کھا کہ طوائف کے گھر‬ ‫باجہ بجانے والے کا گناہ اس شخص کی بہ نسبت کم ھے‬ ‫جو منارہ پر پیغمبر اسلم پر درود پڑھے۔‬‫اورصفحھ ۰۵۲پر لکھا ھے کہ سید علوی ابن احمد حداد نے‬‫فرمایا میں نے مذاھب اربعہ کے بے شمار بڑے بڑے علماء کے‬ ‫جوابات دیکھے ھیں یہ علماء حرمین شریفین ،احساء ،‬ ‫بصرہ بغداد ،حلب ،یمن اور دوسرے اسلمی شھروں کے‬ ‫رھنے والے تھے جنھوں نے نثر ونظم دونوں میں جوابات‬
  • ‫لکھے ۔میرے پاس ابن عبدالرّزاق حنبلی کی اولد میں سے‬ ‫ایک شخص کا مجموعہ لیا گیا اس میں بھت سے علماء‬ ‫کی جانب سے لکھی گئی رد موجود تھیں ۔‬ ‫اس کے بعد لکھا ھے :اور میرے پاس شیخ محدث صالح‬ ‫فلنی مغربی ضخیم کتاب لئے جس میں علماء مذاھب‬ ‫اربعہ حنفیہ ،مالکیہ ،شافعیہ ،اور حنبلیہ کے خطوط اور‬ ‫جوابات تھے جو محمد ابن عبدالوھاب کے جواب میں لکھے‬ ‫گئے تھے ۔اورص ۸۴۲پر ھے۔ محمد ابن عبدالوھاب کی رد‬‫بھت سے علماء نے کی ھے ۔اس کے ھم عصر علماء نے بھی‬‫اور بعد میں آنے والے علماء نے بھی اور اب تک علماء اسلم‬ ‫کے اعتراضوں کے تیر اس کو نشانہ بناتے رھتے ھیں ۔‬‫اس کے ھم عصر رد کر نے والوں میں پیش پیش احساء کے‬‫حنبلی تھے اور درحقیقت تمام اعتراضات ابن تیمیہ کو نشانہ‬ ‫بنارھے تھے ۔‬ ‫مولف کھتا ھے :ابوالفضل قاسم محجوب مالکی نے بھی‬ ‫ایک رسالہ کے ذریعہ جس کا تذکرہ احمد ابن ضیاف کی‬ ‫کتاب “اتحاف اھل الزمان باخبار ملوک تونس وعھد‬ ‫المان ،،میں ملتا ھے ،محمد ابن عبدالوھاب کی رد کی ھے‬
  • ‫اور اس کے آراء اور فتاوی کو باطل قرار دیا ھے ۔‬‫اس رسالہ کا ایک حصّہ حاج مالک داود کی کتاب “الحقائق‬‫السلمیةفی الرد علی المز اعم الوھابیةبادلّةالکتاب والسنة‬ ‫النبویة ،،سے ملحق کرکے ۳۰۴۱ ئمیں طبع ھوا تھا اور‬ ‫دوبارہ آفسٹ سے ترکیہ میں ۵۰۴۱ ئمیں طبع ھوا ۔‬ ‫جھانمیری واقفیت میں علماء مذاھب اربعہ کی جانب سے‬ ‫رد اور طعن محمد ابن عبدالوھاب پرکی گئیں وہ میں نے‬ ‫درج کردیں ۔‬ ‫احمد ابن تیمیہ حرانی اور اس پر کئے گئے اعتراضات‬ ‫محمد ابن عبد الوھاب کے امام ، احمد ابن تیمیہ جس کے‬‫آراء و افکار کی اس نے تقلید کی ھے اور جس کے عقائد کو‬ ‫اس نے اخذ کیا اور جس پر اپنے دین کی بنیاد رکھی اور‬‫نتیجہ میں صراط مستقیم سے نہ صرف خود بھٹکا بلکہ اور‬‫بھت سے مسلمانوں کو بھی گمراہ کیا ھے اس کے بارے میں‬ ‫علماء کے اقوال نقل کئے جاتے ھیں ۔‬ ‫چنانچہ علماء مکہ کے بقول جیسا کہ کتاب “ سیف الجبار‬‫المسلول علی اعداء ال برار،، طبع ترکیہ ۹۷۹۱ءء کے ص ۴۲‬ ‫پر ھے کہ : بدبخت ابن تیمیہ کے دور کے علما نے اس کی‬
  • ‫گمراھی اور اس کے قید کر نے پر اجماع کیا ھے اور اعلن‬ ‫کیا گیا ھے کہ جو شخص ابن تیمیہ کے عقیدوں پر ھو گا‬ ‫اس کا مال اور خون مباح ھے ۔“کشف الظنون ،،ج ۱ ص‬‫۰۲۲ پر ھے کہ علماء نے اس کی رد میں بھت مبالغہ کیا ھے‬ ‫یھاں تک کہ تصریح کی ھے کہ یہ شخص )ابن تیمیہ (‬ ‫جسے شیخ السلم کھا گیا ھے ، کافر ھے ، اس کی کتاب‬ ‫کی جلد ۲ ص ۸۳۴۱ پر ھے :ابن تیمیہ نے اپنی کتاب “‬ ‫العرش وصفتہ ،، میں ذکر کیا ھے کہ خداوند عالم کرسی‬‫پر بیٹھتا ھے اور ایک جگہ خالی چھوڑ کر رکھی ھے جھاں‬ ‫رسول صلی ا علیہ و آلہ وسلم بیٹھیں گے۔ اس کو ابو‬‫حیان نے کتاب “ النھر،، میں قول خدا “وسع کرسیہ السمٰوات‬ ‫والرض ،،کے ذیل میں لکھا ھے : میں نے احمد ابن تیمیہ‬ ‫کی کتاب “ العرش ،، میں اسی طرح پڑھاھے ۔ انتھی‬ ‫اور اسی کتاب کے ص ۸۷۰۱ پر احمد ابن تیمیہ جنبلی کی‬‫ایک کتاب بنام “الصراط المستقیم والرد علی اھل الجحیم ،،‬‫کا ذکر کیا ھے اور اسی میں ایسی باتیں لکھی ھیں جن کا‬‫تذکرہ کرنا مناسب نھیں ھے مثل عبد ا ابن عباس کو کافر‬‫قرار دینا ۔حصینی نے اپنی کتاب میں اس کی رد لکھی ھے ۔‬
  • ‫جامعہ ا زھر کے ایک عالم شیخ محمد نجیت مطیعی حنفی‬‫نے اپنی کتاب “ تطھیر الفواد من دنس ال عتقاد ،،مینص ۹ پر‬ ‫ابن تیمیہ کے بارے میں لکھا ھے کہ اس نے اپنی کتاب‬ ‫“الواسطہ ،، وغیرہ کی تالیف کی تو ایسی باتیں گڑھیں‬ ‫جن سے مسلمانوں کے اجماع کو پارہ کر دیا ۔اس نے کتاب‬ ‫خدا ، صریح سنت اور سلف صالح کی مخالفت کی ھے۔‬ ‫اپنی فاسد عقل کا مطیع ھوا ھے اور جان بوجہ کر گمراہ‬ ‫ھواھے ۔اس کا معبود اس کی ھوائے نفس ھے۔ اسے یہ‬ ‫گمان ھوا ھے کہ جو کچہ اس نے بیان کیا ھے حق ھے‬‫حالنکہ وہ حق نھیں ھے بلکہ یہ جھوٹ اور قول منکر ھے‬‫،اور اسی کتاب کے ص ۳۱پر ھے :یہ کتاب ابن تیمیہ کی بھت‬ ‫سی من گڑھت باتوں پر مشتمل ھے جوکتاب و سنّت اور‬ ‫جماعت مسلمین کے مخالف ھے ۔‬ ‫اور صفحھ ۰۱ /۱۱پر ھے:وہ برابر اکابر کے پیچھے پڑا رھا‬‫یھاں تک کہ اس کے زمانے والے اس کے خلف مجتمع ھوئے‬‫اسے فاسق قرار دیا اور بدعتی ٹھھرایا بلکہ ان میں سے زیا‬ ‫دہ لوگوں نے اسے کافر قرار دیا ۔‬ ‫اور صفحہ ۷۱پر ھے :اپنے زمانے میں ابن تیمیہ کا وتیرہ ادب‬
  • ‫اورھر زمانے میں اس کے پیرووں کا یھی طریقہ رھا ھے‬ ‫کھ:‬‫“یقولون آمنّا بالله و بالیوم الخروما ھم بمومنین ،یخادعون‬ ‫اللهوالذین آمنوا وما یخدعون الانفسھم وما یشعرون ،،یہ‬ ‫لوگ کھتے ھیں کہ ھم ا اور روز قیامت پر ایمان لئے‬ ‫ھیں حالنکہ یہ مومن نھیں ھیں ۔یہ ا کو اور ایمان‬ ‫والوں کو دھوکہ دیتے ھیں حالنکہ یہ خود اپنے کو دھوکہ‬ ‫دے رھے ھیں اور انھیں اس کا احساس نھیں ھے ۔،،‬ ‫مولف کھتا ھے :یہ منافقیں کی صفت ھے جسے خدا وند‬ ‫عالم نے اپنی کتاب قرآن کریم میں بیان کیا ھے ۔‬ ‫اور یافعی نے “مرآةالجنان ،،ج ۴/ص ۰۴۲طبع حیدرآباد دکن‬ ‫۹۳۳۱ھئمطبع دائرةالمعارف النظامیہ میں ابن تیمیہ کے‬ ‫بعض مھمل اقوال کا ذکر کیا ھے مثل ًلکھا ھے:خدا‬‫حقیقتاعرش پر بیٹھا ھے اور الفاظ وآواز سے گفتگو کرتا ھے‬ ‫پھرلکھا ھے کہ دمشق مینیہ اعل ن کردیا گیا کہ جو‬ ‫شخص ابن تیمیہ کے عقیدہ پر ھوگا اس کی جان اور اس‬ ‫کا مال مباح ھے ۔‬‫اور صفحھ ۸۷۲پر ۸۲۷ ئکے واقعات کے سلسلہ میں ھے :اس‬
  • ‫)ابن تیمیہ (کے عجیب وغریب مسائل ھیں جن کے بارے میں‬ ‫اس پر طعن وتشنیع کی گئی ھے اورجن کے سبب مذھب‬ ‫اھل سنّت ترک کرنے کی خاطر اسے قید کیا گیا ۔پھر اس‬ ‫کی بھت سی برائیوں کو شمار کراتے ھوئے لکھا ھے‬ ‫کھ:اس کی قبیح ترین برائی یہ تھی کہ اس نے پیغبر‬ ‫اسلم صلّی ا علیہ وآلہ وسلم کی زیارت سے منع کر دیا‬‫تھا ۔آپ پر اور دوسرے اولیاء خدا اور اس کے برگزیدہ بندوں‬ ‫پر طعن و تشنیع کی تھی اور اسی طرح مسٴلہ طلق‬‫وغیرہ کے سلسلہ میں اس کا مسلک اور جھت کے بارے میں‬ ‫اس کا عقیدہ اور اس بارے میں جوباطل اقوال اس سے‬ ‫نقل ھوئے ھیں یہ سب اور اس کے علوہ اور بھی بھت‬ ‫سی باتیں اس کے قبائح میں سے ھیں ۔‬ ‫شیخ ابن حجر ھیتمی نے “تحفہ ،،میں لکھا ھے :خدا کی‬‫جسمیت یا اس کے جھت میں ھونے کا دعویٰ ایساھے کہ اگر‬‫کوئی اس کا عقیدہ رکھے تو کافر ھے ۔سفینةالراغب ص ۴۴‬ ‫طبع بولق مصر ۵۵۲۱ ئ‬‫شیخ یوسف نبھانی نے اپنی کتاب “شواھدالحق ،،کے صفحہ‬‫۷۷۱پر لکھا ھے :چوتھا باب ،ابن تیمیہ کے اوپرعلماء مذاھب‬
  • ‫اربعہ کے اعتراضات کی عبارتیں اور اس کی کتابوں پر کئے‬ ‫گئے ایرادات اور بعض اھم مسائل جیسے خدا وندعالم کا‬‫ایک خاص جھت وسمت میں ھونا ،کے بارے میں اھل سنّت‬ ‫کی مخالفت کے بیان میں ۔پھر ایک جماعت کا ذکر کیا ھے‬ ‫جنھوں نے اس پر طعن کیاھے لکھا ھے :‬ ‫“انھیں طعن کرنے والوں میں سے امام ابوحیان ھینجو ابن‬‫تیمیہ کے دوست تھے ۔جب اس کی بدعتوں سے با خبر ھوئے‬‫تو اس کو بالکل چھوڑ دیا اور لوگوں کو اس سے دور رھنے‬ ‫کی تاکید کی ۔اور انھیں میں سے امام عزالدین ابن‬ ‫جماعةھیں انھوں نے اس کی رد کی ھے اور اسے برا کھا‬ ‫ھے ۔،،‬ ‫انھیں میں سے مل علی قاری حنفی ھیں انھوں نے شفاء‬ ‫کی شرح میں لکھا ھے : حنبلیوں میں سے ابن تیمیہ نے‬ ‫افراط سے کام لیا چنانچہ اس نے زیارت نبی کے لئے سفر‬‫کرنے کو حرام قرار دیا ھے ۔اسی طرح اس کے مقابل والے نے‬‫بھی افراط سے کام لیا ھے چنانچہ کھا ھے :زیارت کا باعث‬ ‫تقرب خدا ھونا ضرویات دین میں سے ھے اور اس کا انکار‬ ‫کرنے وال کافر ھے ۔اور شاید یہ دوسرا قول حق سے قریب‬
  • ‫ھے کیونکہ جس کے مستحب ھونے پر اجماع ھو اس کا‬‫حرام قراردینا کفر ھوگاکیونکہ یہ مباح متفق علیہ کے حرام‬ ‫قرار دینے سے بڑہ کر ھے۔‬‫اور انھیں میں سے شباب الدین خفاجی حنفی ھیں جن کے‬ ‫کلم کو اس طرح ذکر کیا ھے :ابن تیمیہ نے ایسی خرافات‬ ‫باتیں لکھی ھیں جن کا ذکر کرنا مناسب نھیں کیونکہ یہ‬ ‫باتیں کسی عقلمند انسان کی ھو ھی نھیں سکتینچہ‬ ‫جائیکہ ایک پڑھے لکھے آدمی کی زبان اورقلم سے صادر‬ ‫ھو ں ۔چنانچہ ابن تیمیہ کا یہ کھنا کہ “قبر پیغمبر اسلم‬ ‫کی زیارت حرام کام ھے ،،کذب محض،لغو ھے اوربکواس‬ ‫ھے ۔ اس کا یہ کھنا “اس کے بارے مےں کوئی نقل موجود‬ ‫نھیں ھے ،،باطل ھے کیونکہ امام مالک ،امام احمد ،اور‬ ‫امام شافعی رضی اللهعنھم کا مذھب یہ ھے کہ سلم‬ ‫ودعا مینقبر شریف کی طرف رخ کرنا مستحب ھے اور یہ‬ ‫بات ان بزرگوں کی کتابونمیں درج ھے۔‬‫اور انھینمیں سے امام محمدزرقانی مالکی ھیں ۔)بنھانی نے‬‫ان کے کچہ کلم کو مواھب لدنیہ کی شرح میں نقل کیا ھے‬ ‫جسے ھم یھانپیش کررھے ھیں:‬
  • ‫“لیکن ابن تیمیہ نے اپنے لئے ایک جدید مذھب ایجاد کیا ھے‬ ‫اور وہ ھے قبروں کی تعظیم نہ کرنا ۰۰۰ کیا یہ شخص‬ ‫جس بات کا علم نھیں رکھتا اس کے جھٹلنے سے‬‫شرماتاھے ؟اور ابن تیمیہ کی طعن وتشنیع کے سلسلے میں‬ ‫اپنی پھلی والی بات دھرائی ھے ۔‬ ‫اور انھیں میں سے امام کمال الدین ز ملکانی شافعی‬ ‫متوفی ۷۲۷ھئنے کشف الظنون میں ان کی ایک‬ ‫کتاب“الذرةالمضیہ فی الرد علی ابن تیمیہ ،،کا ذکر کیا ھے‬‫انھوں نے ان مسائل میں اس سے مناظرہ کیا ھے جن میں‬ ‫وہ مذاھب اربعہ سے منحرف ھوگیا ھے اور ان میں قبیح‬ ‫ترین مسئلہ اس کا انبیاء وصالحین خصوصاسیدالمرسلین‬‫کی قبروں کی زیارت اور آپ کے وسیلہ سے خدا سے مانگنے‬ ‫کو منع کرنا ھے ۔‬ ‫اور انھیں میں سے امام کبیرشھیر تقی الدین سبکی‬‫شافعی ھیں)ابن تیمیہ پر اعتراضات کو ان کی کتاب شفاء‬‫السقام فی زیارت خیر النام علیہ السل م سے نقل کیا ھے(‬ ‫اس کتاب میں انھوں نے اسے بدعتی کھا ھے ۔ اور انھیں‬‫میں سے حافظ ابن حجر عسقلنی شافعی ھیں)انھوں نے‬
  • ‫اپنی کتاب فتح الباری فی شرح البخاری میں اس پر رد کی‬ ‫ھے (اور انھیں میں سے امام عبد الرووف منادی شافعی‬ ‫ھیں انھوں نے شرح شمائل میں کھا ھے :اور ابن قیّم کا‬‫اپنے شیخ ابن تیمیہ کے حوالے سے یہ کھناکہ “مصطفی صلّی‬ ‫ا علیہ وآلہ وسلم نے جب اپنے پرور دگارکو اپنے دونوں‬‫شانوں کے درمیان اپنے ھاتہ رکہ کر دکھائے تو خدااس جگہ‬ ‫کو بالوں کو نوازا ۔اس کی ردشارح یعنی ابن حجرمکّی نے‬ ‫اس طرح کی بات ان دو نوں )ابن تیمیہ وابن قیم(کی بد‬ ‫ترین گمراھی ھے اور یہ ان دونوں کے اس عقیدہ پر مبنی‬ ‫ھے کہ خدا جھت اور جسم رکھتا ھے۔خدا وند عالم‬‫ظالموں کے اس قول سے کھیں بزرگ وبرتر ھے اس کے بعد‬‫منادی نے لکھا ھے :اب میں کھتا ھوں ان دونونکا بدعتیوں‬ ‫میں سے ھونا مسلّم ھے۔‬ ‫اور انھیں میں سے ھمارے دوست عالم با عمل ،فاضل‬ ‫کامل ، شیخ مصطفی ابن احمد سطی جنبلی دمشقی‬ ‫حفظ ا وجزا ہ ا احسن الجزا ء ھیں ۔ مو صوف نے‬ ‫ایک مخصوص رسالہ تالیف کیا ھے جس کا نام ) النقول‬ ‫الشرعیہ فی الرد علی الو ھابیة ( ھے۔انھیں میں سے امام‬
  • ‫شھاب الدین احمد بن حجر ھیثمی مکی شافعی ھیں‬ ‫انھوں نے ابن تیمیہ پر بھت سخت ردو تنقید کی ھے ۔‬ ‫اور نبھانی نے شواھدالحق کے ص ۱۹۱ پر پھلے تو ان‬‫لوگوں کے نام نقل کئے ھیں جنھوں نے ابن تیمہ کو طعن و‬‫تشنیع کی اور جن کا ذکر ابھی گزرا ھے ۔ اس کے بعد کھتے‬ ‫ھیں : لھذا ثابت ھوا اور آفتاب نصف النھار کی طرح‬ ‫روشن ھوا کہ علماء مذ ھب اربعہ نے ابن تیمیہ کی بد‬ ‫عتوں کے رد کرنے پر اتفاق کیا ھے اور کچہ علماء نے اس‬‫کی نقل کی صحت پر طعن کیا ھے تو بھل جن مسائل میں‬ ‫دین سے انحراف کیا ھے اور اجماع مسلمین کی مخالفت‬ ‫کی ھے خاص کر ان مسائل میں جو سید المر سلین سے‬ ‫متعلق ھیں اس کی کھلی ھوئی غلطی پر سخت طعن‬ ‫وتشنیع کیوں نہ کرتے ۔‬‫حنفیوں میں سے جنھوں نے اس کی نقل کے صحیح ھونے پر‬‫طعن کیا ھے شھاب الدین خفاجی شارح الشفا ء ھیں جن‬ ‫کا ذکر گزر چکا ھے ۔ اور مالکیوں میں سے امام زرقانی‬ ‫ھیں شرح مواھب میں ، یہ تذ کرہ بھی گزر چکا ھے ۔ اور‬ ‫شافیوں میں سے امام سبکی ھیں جیسا کہ ان کی کتاب‬
  • ‫شفاء السقام میں مذ کور ھے اس میں انھوں نے یہ واضح‬ ‫کیا ھے کہ نہ صرف یہ کہ ابن تیمیہ کی رائے غلط ھے بلکہ‬ ‫اس کے نقل کئے ھوئے وہ احکام شرعیہ بھی صحیح نھیں‬ ‫ھیں جس کے ذریعہ اس نے اپنی بدعت کی تقویت پر‬‫استدلل کیا ھے اور انھیں مذاھب اربعہ کی طرف منسوب‬‫کیا ھے حالنکہ ائمہ مذا ھب اربعہ نے وہ احکام نھیں بیان‬ ‫کئے ھیں ۔اسی طرح اس کے نقل کی عدم صحت کا ذکر‬ ‫امام ابن حجر ھیثمی نے بھی اس کے اوپر اپنے اعترا ضات‬ ‫میں کیا ھے اور یہ بات پو شیدہ نھیں ھے کہ یہ چیز ایک‬‫عالم کے اندر بھت بڑاعیب اور بھت بڑا اخلقی جرم ھے جو‬‫اس پر اعتماد کو ضعیف کر دیتا ھے اور اس کے منقولت کے‬‫اعتبار کو ساقط کر دیتا ھے چاھے وہ احفظ حفاظ اورا علم‬ ‫علماء میں سے ھو اور ابن تیمیہ کے منقو لت کے معتبر نہ‬ ‫ھونے کی تقویت اس قول سے بھی ھوتی ھے جو اس کے‬‫بارے میں حافظ عراقی نے کھا ھے۔ کلم نھبانی تمام ھوا ۔‬ ‫شواھد الحق ص ۷۷۱تا ۱۹۱‬ ‫ابن تیمیہ کا ذکر ڈاکٹر حامد حفنی داوود حنفی نے بھی‬ ‫اپنی کتاب ) نظرات فی الکتب الخالدة( ص ۱۳ مطبوعہ‬
  • ‫مصر ۹۹۳۱ء دارالمعلم للطباعة میں کیا ھے اور اسے بدعتی‬‫قرار دیا ھے اور حاشیہ میں اس کلمہ پر نوٹ لگایا ھے کہ :‬‫اکثر علماء اھل سنّت نے اس کے بد عتی ھونے کا قول اختیار‬ ‫کیا ھے رہ گئے صوفیہ تو انھوں نے اس پر اجماع کیا ھے ،‬‫امام تقی الدین سبکی اور ابن تیمیہ کے درمیان فقہ وعقیدہ‬‫کے اکثر گوشوں کے بارے میں خط وکتابت ھوتی ھے ۔دیکھئے‬ ‫ھماری کتاب )التشریع ال سلمی فی مصر ( انتھی ۔‬ ‫عبدالغنی حمادہ اپنی کتاب ) فضل الذاکرین والرد علی‬ ‫المنکر ین ( طبع سوریہ اَدْلبْ ۱۹ ۳۱ء ص ۳۲ پر اس طرح‬ ‫َ‬ ‫وھابیت پر طعن کر تے ھیں :‬‫شیخ وھابیت ابن تیمیہ کے بارے میں علمہ مصر علء الدین‬ ‫بخاری نے لکھاھے کہ : ابن تیمیہ کافر ھے جیسا کہ اس کے‬ ‫زمانے کے بزر گ عالم زین الدین حنبلی نے کھا ھے کہ میرا‬ ‫اعتقاد یہ ھے کہ ابن تیمیہ کافر ھے اور کھتے تھے کہ امام‬ ‫سبکی رضی ا عنہ ابن تیمیہ کی تکفیر سے معذور ھیں‬ ‫کیونکہ اس نے امت اسلمیہ کو کافرقرار دیا ھے اور اسے‬‫قول خدا :“اتخذ وااحبار ھم ورھبانھم ار بابا من دون ا ،،‬ ‫کی تفسیر کر تے ھوئے یھودو نصاریٰ سے تشبیہ دی ھے۔‬
  • ‫علماء مذاھب نے لکھا ھے کہ : ابن تیمیہ زندیق ھے کیونکہ‬ ‫وہ پیغمبر اسلم اور آپ کے دونوں ساتھیوں کی توھین‬ ‫کرتا تھا اور اس کی کتابیں خدا وند عالم کی تشبیہ اور‬ ‫اسے صاحب جسم قرار دینے سے بھری ھوئی ھیں ۔‬ ‫اور اس کے زمانے کے علمہ ابن حجر رضی ا عنہ نے کھا‬ ‫ھے ۔ ابن تیمیہ ایک ایسا بندہ ھے جسے خدا نے رسوا ،‬‫گمراھ، اندھا ، بھرا اور ذلیل کیا ھے ۔اس کے خلف مذاھب‬ ‫اربعہ میں سے اس کے دور کے علماء اٹہ کھڑے ھوئے اور‬ ‫اکثر نے اس کو فاسق اور کافر قرار دیا ھے ۔علماء نے کھا‬ ‫ھے کہ ابن تیمیہ نے صحابہ کرام رضی ا عنھم کو کافر‬ ‫قرار دینے میں خوارج کے مذ ھب کا اتباع کیا ھے ۔‬ ‫اور ائمہ حفاظ نے کھا ھے کہ ابن تیمیہ خوارج میں سے‬ ‫ھے ،جھوٹا ھے ، شریر ھے ، افترا پر داز ھے ۔“فضل الذا‬ ‫کرین ،،میں لفظ بہ لفظ مو جود ھے ۔‬ ‫اور ابو حامد مرزوق شامی نے اپنی کتاب ۔“ التوسل بالنّبی‬‫وبا لصالحین ،،مطبوعہ تر کیہ طبع آفسٹ ۴۸ ۹۱ ءء کے ص‬ ‫۴ پر لکھا ھے:‬‫“ ایک بار ابن تیمیہ نے دمشق کے ممبر پر جانے کے بعد کھا :‬
  • ‫“ خدا وند عالم اسی طرح عرش سے اتر تا ھے جیسے میں‬‫ممبر سے اتر رھا ھوں اور ایک زینہ نیچے اتر کر دکھایا ھے ،‬ ‫، اس کے بعد ابو حامد نے لکھا ھے کہ اس واقعہ کو‬‫دیکھنے والوں میں فقیہ سیاح ابن بطوطہ مغری بھی ھیں‬‫اور “ التوسل بالنّبی وبالصالحین ،،کے ص ۶ پر ابن تیمیہ سے‬ ‫نقل کیا ھے کہ ابن تیمیہ نے لکھا ھے کھ“ خدا حق تعالیٰ‬ ‫عرش کے اوپر ھے ،، اور اسی کتاب کے ص ۶۱۲ پر کتاب “‬ ‫دفع شبہ من شبّہ وتمرّد ،،طبع مصر ۰۵ ۳۱ء ہ مطبع‬‫عیسی حلبی ، تصنیف ابو بکر حصنی دمشقی متوفی ۹۲۸ ء‬ ‫ٰ‬‫سے نقل کر تے ھوئے لکھا ھے کہ مصنف مذکور نے ابن تیمیہ‬ ‫کے بارے میں کھا ھے :“ میں نے اس خبیث )ابن تیمیہ ( کے‬ ‫کلم کو دیکھا جس کے دل میں انحراف کا مرض ھے جو‬ ‫فتنہ پیدا کر نے کے لئے متشابہ آیات و احادیث کا اتباع کر تا‬ ‫ھے اور عوام و غیر عوام میں سے ان لوگوں نے اس کی‬ ‫پیروی کی جس کے ھلک کر نے کا خدا نے ارادہ کیا تھا ،‬ ‫میں نے اس میں ایسی باتیں پائیں جن کو ادا کر نے کی‬‫مجھ میں قدرت نھیں ھے اور نہ میری انگلیوں اورقلم میں‬ ‫انھیں تحریر کر نے کی جرات ھے کیو نکہ اس نے پر وردگار‬
  • ‫عالم کی اس بات پر تکذیب کی ھے کہ اس نے کتاب مبین‬ ‫میں اپنے کو منزہ قرار دیا ھے ۔اسی طرح اس کے بر گزیدہ‬‫اور منتخب افراد خلفاء راشدین اور ان کے صالح پیروکاروں‬ ‫کی توھین اور عیب جوئی کی ھے لھذا میں نے ان کا ذکر‬ ‫کرنا مناسب نہ جانا اور صرف ان باتوں کو ذکر کیا جنھیں‬‫ائمہ متقین نے ذکر کیا تھا اور جن پر ان کا اتفاق ھے وہ یہ‬ ‫کی ابن تیمیہ بد عتی اور دین سے خارج ھے ۔‬‫حافظ ابن حجر نے “ الفتاوی الحدیثیہ ،، ص ۶۸ پر لکھا ھے‬ ‫کہ “ ابن تیمیہ ایسا بندہ ھے جسے خدا نے رسوا ، گمراہ ،‬‫اندھا ، بھرہ ، اور ذلیل بنا دیا ھے اور اسی بات کی تصریح‬ ‫ان اماموں نے بھی کی ھے جنھوں نے اس کے فاسد ھونے‬ ‫اور اس کی باتوں کو جھوٹ ھونے کا بیان کیا ھے اور جو‬ ‫شخص اسے جاننا چاھتا ھو وہ امام مجتھد ابوالحسن‬‫سبکی جن کی ،امامت ، جللت ، شان اور مرتبہ اجتھاد تک‬ ‫پھنچنے پر اتفاق ھے ان کے اور ان کے فرزند تاج اور شیخ‬ ‫امام عزّ بن جماعہ اور شافعیہ ، مالکیہ ، حنفیہ ، میں سے‬ ‫ان کے ھم عصر علماء کے کلم کو مل حظہ کریں ، ابن‬ ‫تیمیہ نے صرف متاخرین صوفیہ کے اوپر اعتراض کرنے پر‬
  • ‫اکتفاء نھیں کی ھے بلکہ عمر ابن خطاب اور علی ابن ابی‬ ‫طالب رضی ا عنھما ،، جیسے حضرات پر بھی اعتراض‬ ‫کیا ھے۔‬ ‫خلصہ یہ کہ اس کے کلم کی کوئی قدرو قیمت نھیں ھے‬ ‫اور چاھئے کہ اس کے بارے میں یہ عقیدہ رکھا جائے کہ وہ‬ ‫بد عتی گمراہ ،گمراہ کن ، جاھل اور غلو کر نے وال ھے ،‬‫خدا اس کے ساتھ اپنے عدل سے معاملہ کرے اور ھمیں اس‬ ‫کے طریقہ ، عقیدہ ، اور عمل سے محفوظ رکھے ۔ آمین ۔‬‫کلم ابن حجر تمام ھوا اسے ھم نے تطھیر الفواد من دنس‬ ‫ال عتقاد ص ۹ طبع مصر ۸۱۳۱ ء ہ تصنیف شیخ محمد‬ ‫نجیت مطیعی حنفی سے نقل کیا ھے۔‬ ‫اس کے بعد کھا کہ وہ خدا کے لئے سمت کا قائل ھے جس‬‫کا لزمی نتیجہ یہ ھے کہ وہ خدا کے لئے جسمیت ، محاذات ،‬ ‫اور استقرار کا قائل ھے ۔‬ ‫کتاب “التوسل با لنّبی وبا لصالحین ،، میں ابن تیمیہ پر اور‬‫بھی بھت سے طعن ھیں جن کو چند عناوین کے تحت ذکر‬ ‫کیا ھے ، جو حسب ذیل ھیں ۔‬ ‫۰ علمہ شھاب الدین احمد بن یحیی حلبی کی جھت کے‬ ‫ٰ‬ ‫ّ‬
  • ‫بارے میں ابن تیمیہ پر رد۔‬‫۰ ابن تیمیہ کے اس زعم کا ابطال کہ خدا حق تعالی عرش‬ ‫ٰ‬ ‫کے اوپر ھے ۔‬ ‫۰ عقیدہ ابن تیمیہ جس کے سبب اس نے جماعت مسلمین‬‫سے مخالفت کی ھے اور انھیں برا کھا ھے جسے قر آن میں‬ ‫طعن کر نے والے او باش ملحدین سے حاصل کیا ھے ۔‬ ‫۰ ابن تیمیہ کی تمام علماء اسلم سے مخالفت ۔‬ ‫ابن تیمیہ کے فتووں کے نمو نے‬ ‫عالم کبیر شیخ محمد بخیت حنفی عالم جامعہ ا زھرنے‬ ‫اپنی کتاب “تطھر الفواد من دنس ال عتقاد ،،طبع مصر‬‫مطبو عہ ۸۱۳۱ئکے ص ۲۱ پر اس شخص کے کچہ فتووں کا‬‫ذکر کیا ھے جن میں سے بعض نمو نے ھم یھاں پر پیش کر‬ ‫رھے ھیں تا کہ ایک غیر جانبدارقاری کو اس کے انحراف ،‬‫فاسد عقیدے اور منحرف فتووں میں علماء اسلم سے اس‬ ‫کی مخالفت کا زیا دہ سے زیا دہ علم ھو سکے ۔‬ ‫)۰( “ اگر کو ئی شخص جان بو جہ کر نماز تر ک کر دے تو‬ ‫اس کی قضا وا جب نھیں ھے۔“‬ ‫)۰( “ حیض والی عورت کے لئے خانہ ء کعبہ کا طواف کرنا‬
  • ‫جائز ھے اور اس پر کوئی کفارہ نھیں ھے۔“‬‫)۰(“ تین طلق ایک طلق کی طرف پلٹایا جائے گا“ اور اس‬ ‫بات کا دعویٰ کر نے سے پھلے خود اسی نے نقل کیا ھے کہ‬ ‫اجماع مسلمین اس کے بر خلف ھے ۔‬ ‫)۰( “ جس اونٹ کے پیر کی موٹی والی نسیں کاٹ دی گئی‬‫ھوں وہ کاٹنے والے کے لئے حلل ھے اور وہ جب تاجروں سے‬‫لے لیا جائے تو زکوٰة کے عوض کافی ھے اگر چہ زکوٰة کے نام‬ ‫سے نہ لیا گیا ھو ۔،،‬‫)۰(“ بھنے والی چیزوں میں اگر جاندار مثل چوھا مر جائے تو‬ ‫یہ چیزیں نجس نھیں ھو تیں“‬ ‫)۰(“ جنب کو چاھئے کہ حالت جنا بت میں نافلہ شب پڑھے‬‫اور تا خیر نہ کرے کہ فجر سے پھلے غسل کر کے پڑھے گا اگر‬ ‫چہ اپنے ھی شھر میں ھو ۔“‬ ‫)۰( “ وقف کرنے والے کی شرط کا کوئی اعتبار نھیں ھے‬‫بلکہ اگر اس نے شا فعیہ پر وقف کیا ھے تو حنفیہ پر صرف‬ ‫کیا جائے گا اور بر عکس ،اور قاضیوں پر وقف کیا ھے تو‬ ‫صو فیہ پر صرف کیا جائے گا ۔،،‬ ‫اسی طرح عقائد اور اصول دین کے مسائل میں بھی‬
  • ‫انحراف کا مر تکب ھوا ھے۔‬‫)۰(“ ْ خدا وند عالم محل حوا دث ھے“تعالیٰ عن ذالک علوا‬ ‫کبیرا‬‫)۰(“خدا مرکب ھے اس کی ذات ویسے ھی محتاج ھے جیسے‬ ‫کل اپنے جزء کا محتاج ھوتا ھے “تَعَا لیٰ عنْ ذَالِکَ،،‬ ‫َ‬‫)۰(“خدا جسم رکھتا ھے،وہ خاص سمت میں ھے ایک جگہ‬‫سے دوسری جگہ منتقل ھوتا ھے ،وہ ٹھیک عرش کے برابر‬‫ھے نہ چھوٹا نہ بڑا“)خدا وندعالم اس قبح وبد ترین افترا ء‬ ‫اور صریحی کفر سے کھیں بال تر ھے ۔خدا اس کے پیرووں‬ ‫کو رسوا کرے اور اس کے معتقدین کا شیرازہ منتشر کرے (‬ ‫)۰(“جھنم فنا ھوجائے گی ،انبیاء معصوم نھیں ھیں۔“‬ ‫)۰(“رسول اللهصلّی ا علیہ وآلہ وسلّم کی کوئی وقعت‬ ‫نھیں ھے ۔ان سے توسل نہ کیا جائے۔“‬ ‫)۰(“پیغمبر اسلم کی زیا رت کے لئے سفر کرنا معصیت ھے‬ ‫اس سفر میں نمازقصر نھیں ھوگی۔“‬ ‫غیر مقلدوں کا اصلی نام وہابی ہے‬ ‫لقب نجدی ،‬
  • ‫کیونکہ ان کا مورث اعلٰی محمد ابن عبدالوہاب ہے جو نجد کا‬‫رہنے وال تھا، اگر انہیں مورث اعلٰی کی طرف نسبت کیا جاوے‬‫تو وہابی کہا جاتا ہے اور اگر جائے پیدائش کی طرف نسبت دے‬‫جائے تو نجدی جیسے مرزا غلم احمد قادیانی کی امت کو‬‫مرزائی بھی کہتے ہیں اور قادیانی بھی پہلی نسبت مورث کی‬‫طرف ہے، دوسری نسبت جائے پیدائش کی طرف اسی جماعت‬‫کی پیشن گوئی خود حضور صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم نے کی‬‫تھی کہ نجد کے متعلق ارشاد فرمایا تھا۔‬ ‫ھناک الزلزل والفتن ویخرج منھا قرن الشیطان۔‬ ‫نجد میں زلزلے اور فتنے میں ہوں گے، اور وہاں سے ایک “‬ ‫“شیطانی فرقہ نکلے گا۔‬‫غرض کہ اس جماعت کا بانی محمد ابن عبد الوہاب نجدی ہے‬‫اور اس کا ہندوستان میں پرورش کرنے وال اسماعیل دہلوی ہے،‬
  • ‫اس فرقہ کے حالت ہماری کتاب جاءالحق حصہ اول میں‬ ‫ملحظہ فرماو یہ لوگ عام مسلمانوں کو مشرک اور صرف‬‫اپنی جماعت کو موحد کہتے ہیں، مقلدوں کے جانی دشمن اور‬ ‫ائمہ اربعہ حضرت امام ابو حنیفہ، امام شافعی، امام مالک،‬ ‫امما احمد بن حنبل رضی اللہ تعالٰی عنہم اجمعین کی شان‬ ‫اقدس میں تبرے کرتے ہیں۔‬‫یہ لوگ اپنے آپ کو اہل حدیث یا عامل بالحدیث کہتے ہیں، پہلے تو‬‫اپنے کو فخریہ طور پر وہابی کہتے تھے، چنانچہ ان کی بہت کتب‬‫کے نام تحفہ وہابیہ وغیرہ ہیں، مگر اب وہابی کے نام سے چڑتے‬‫ہیں، ان کے عقائد و اعمال نہایت ہی گندے اسلم اور مسلمانوں‬ ‫کے دامن پر بدنما داغ ہیں، ہم یہاں اہل حدیث نام پر مختصر‬ ‫تبصرہ کرتے ہیں، تا کہ معلوم ہو کہ ان کا نام بھی درست‬‫نہیں، مسلمانوں سے امید انصاف ہے اور اللہ تعالٰی اور اس کے‬ ‫محبوب صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم سے امید قبول ہے۔‬
  • ‫خیال رہے کہ دنیا کا کوئی شخص اہل حدیث یا عامل بالحدیث‬‫ہو سکتا ہی نہیں، کسی کا اہل حدیث یا عامل الحدیث ہونا ایسا‬‫ہی ناممکن ہے، جیسے دو تقیضین یا دو ضدیں کا جمع ہونا غیر‬‫ممکن کیونکہ حدیث کے لغوی معنی ہیں بات، گفتگو یا کلم رب‬ ‫فرماتا ہے۔‬ ‫فبای حدیث بعدہ یومنون۔‬ ‫“قرآن کے بعد کونسی بار پر ایمان لئیں گے۔ “‬ ‫اللہ نزل احسن الحدیث ۔‬ ‫“اللہ تعالٰی نے سب سے اچھا کلم نازل فرمایا۔ “‬ ‫ومن الناس من یشتری لھو الحدیث لیضل عن سبیل اللہ‬‫بعض لوگ وہ ہیں، جو کھیل کی باتیں و ناول، قصے خریدتے “‬ ‫“ہیں، تاکہ اللہ کی راہ سے بہکا دیں۔‬ ‫اس تیسری آیت میں ناول قصے کہانیوں کو حدیث فرمایا گیا۔‬
  • ‫اصطلح شریعت میں حدیث اس کلم و عبارت کا نام ہے، جس‬‫میں حضور سید عالم صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم کے اقوال یا‬ ‫اعمال اسی طرح صحابہ کرام کے اقوال و اعمال بیان کئے‬ ‫جاویں، اس عامل بالحدیث فرقے سے سوال ہے کہ تم کونسی‬‫حدیث پر عامل ہو، لغویپر یا اصطلحی پر ہو اگر لغوی حدیث ہو‬ ‫تو چاہئے کہ ہر ناول گو قصہ خوان اہل حدیث ہو کہ وہ حدیث‬ ‫یعنی باتیں کرتا ہے ہر سچی جھوٹی بات پر عمل کرتا ہے، اگر‬ ‫اصطلحی حدیث پر عامل ہو تو پھر سوال یہ ہو گا کہ ہر‬ ‫حدیث پر عامل ہو یا بعض پر دوسری بات غلط ہے کیونکہ‬ ‫حضور کے کسی نہ کسی فرمان پر ہر شخص ہی عامل ہے۔‬ ‫حضور صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ سچ نجات‬ ‫دیتا ہے جھوٹ ہلک کرتا ہے، ہر مشرک و کافر اس کا قائل ہے،‬ ‫وہ سب ہی اہل حدیث ہو گئے، تم حنفی، شافعی، مالکی،‬ ‫حنبلی مسلمانوں کو اہل حدیث کیوں نہیں مانتے یہ تو ہزارہا‬ ‫حدیثوں پر عمل کرتے ہیں، اگر حدیث کے معنی ہیں حضور کی‬ ‫ساری حدیثوں پر عمل کرنے والے تو یہ نہ ممکن ہے کیونکہ‬
  • ‫حضور کی بعض حدیثیں منسوخ ہیں، بعض حدیثوں میں‬ ‫حضور کے وہ خصوصی اعمال شریف ہیں جو حضور کے لئے‬‫مباح یا فرض تھے، ہمارے لئے حرام ہے جیسے منبر پر نماز پڑھنا‬ ‫اونٹ پر طواف فرمایا، حضرت حسین سیدالشہداء خاتم آل‬‫عبار رضی اللہ تعالٰی عنہ کے لئے سجدہ دراز فرمایا، حضرت‬‫امامہ بنت ابی العاص کو کندھے پر لے کر نماز پڑھنا، نو بیویاں‬ ‫نکاح میں رکھنا، بغیر مہر نکاح ہونا ازواج میں عدل و مہر‬ ‫واجب نہ ہونا۔ بلکہ حدیث سے ثابت ہے کہ حضور صلی اللہ‬ ‫،تعالٰی علیہ وسلم کلمہ یوں پڑھتے تھے‬ ‫لالہ ال اللہ وانی رسول للہ۔ الخ‬‫“اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور میں اللہ کا رسول ہوں۔ “‬
  • ‫یہ حضرات اسی حدیث پر عمل کرکے اس طرح کلمہ کا ورد‬‫نہیں کر سکتے، غرضکہ حدیث میں حضور صلی اللہ تعالٰی علیہ‬‫وسلم کے ایسے اقوال و اعمال بھی ذکر ہیں جو حضور کے لئے‬ ‫کمال ہیں، ہمارے لئے کفر۔‬‫اسی طرح حضور علیہ السلم کے وہ افعال کریمہ جو نسیان یا‬ ‫اجتہادی خطاء سے سرزد ہوئے حدیث میں مذکور ہیں، عامل‬ ‫الحدیث صاحبان کو چاہیئے کہ ان پر بھی عمل کیا کریں۔ ہر‬‫حدیث پر جو عامل ہوئے بہرحال کوئی شخص ہر حدیث پر عمل‬ ‫نہیں کر سکتا، جو اس معنی سے اپنے کو اہل حدیث یا عامل‬‫بالحدیث کہے، وہ غلب کہتا ہے جب ہی نام جھوٹ ہے، تو اللہ کے‬ ‫فضل سے کام بھی سارے کھوٹے ہی ہوں گے، اسی لئے حضور‬ ‫صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا۔‬ ‫علیکم بسنتی وسنۃ الخلفاء الراشدین‬ ‫“لزم پکڑو میری اور خلفاءراشدین کی سنت کو۔ “‬
  • ‫یہ نہ فرمایا کہ میری حدیث کو لزم پکڑو، کیونکہ ہر حدیث‬ ‫لئق عمل نہیں ہر سنت لئق عمل ہے، حضور کے وہ اعمال‬‫طیبہ جو منسوخ بھی نہ ہوئے ہوں، حضور سے خاص بھی نہ‬ ‫ہوں خطاء انسیانا بھی درزد نہ ہوں، بلکہ امت کے لئے لئق‬ ‫عمل ہوں، انہیں سنت کہا جاتا ہے، لٰہذا ہمارا نام اہل سنت‬ ‫بالکل حق و درست ہے، کہ ہم بفضلہ تعالٰی حضور صلی اللہ‬‫تعالٰی علیہ وسلم کی ہر سنت پر عامل ہیں، مگر وہابیوں کا نام‬ ‫اہل حدیث بالکل غلط ہے کہ ہر حدیث پر عمل نا ممکن۔‬‫اب حدیثوں کی یہ چھانٹ کہ کون سی حدیث منسوخ ہے کون‬ ‫حکم کون حدیث حضور صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم کی‬ ‫خصائص میں سے ہے، کون سب کی اتباع کے لئے کون فعل‬‫شریف اقتداء کے لئے یے، کون نہیں کس فرمان کا کیا منشاء ہے،‬ ‫کس حدیث سے کہا مسئلہ صراحۃ ثابت ہے اور کون مسئلہ‬ ‫ً‬
  • ‫اشارۃ کون دللۃً کون اقتضاء یہ سب کچھ امام مجتہد ہی بتا‬ ‫ً‬ ‫سکتے ہیں، ہم جیسے عوام وہاں تک نہیں پہنچ سکتے، جیسے‬‫قرآن عمل کرانا حدیث کا کام ہے، ایسے ہی حدیث پر عمل کرانا‬ ‫امام مجتہد کا کام یوں سمجھو کہ حدیث شریف رب تک‬‫پہنچنے کا راستہ ہے اور امام مجتہد اس راستہ کا نور جیسے بغیر‬‫روشنی راہ طے نہیں ہوتا، بغیر امام و مجتہد حضور صلی اللہ‬‫تعالٰی علیہ وسلم کی سنتوں پر عمل کرنا نا ممکن ہے، اسی لئے‬ ‫علماء فرماتے ہیں۔‬ ‫القراٰن والحدیث یضلن ال بالمجتھد۔‬ ‫“بغیر مجتہد قرآن و حدیث گمراہی کا باعث ہیں۔ “‬ ‫رب تعالٰی قرآن کریم کے متعلق فرماتا ہے۔‬ ‫یضل نہ کثیرا و یھدی نہ کثیرا ۔‬ ‫اللہ تعالٰی قرآن کے ذریعے بہت کو ہدایت کرتا ہے اور بہت کو “‬ ‫“گمراہ کر دیتا ہے۔‬
  • ‫چکڑالوی اسی لئے گمراہ ہیں کہ وہ قرآن شریف بغیر حدیث کے‬‫نور کے سمجھنا چاہتے ہیں، براہ راست رب تک پہنچنا چاہتے ہیں،‬ ‫وہابی غیر مقلد اسی لئے راہ سے بھٹکے ہوئے ہیں کہ یہ حدیث‬ ‫کو بغیر علم کی روشنی اور بغیر مجتہد کے نور کے سمجھنا‬ ‫چاہتے ہیں، مقلدین اہل سنت کا انشاءاللہ بیڑا پار ہے، کہ ان کے‬ ‫پاس کتاب اللہ بھی ہے سنت رسول اللہ بھی اور سراج امت‬ ‫امام مجتہد کا نور بھی۔‬ ‫یوم ندعوا کل اۃ ناس باما مھم۔‬ ‫“اس دن ہم ہر شخص کو اس کے امام کیساتھ بلئیں گے۔ “‬‫خیال رکھو کہ قرآن و سنت کا سمندر ہم مقلد بھی عبور کرتے‬‫ہیں، اور غیر مقلد وہابی بھی، لیکن ہم تقلید کے جہاز کے ذریعہ‬ ‫جس کے ناخذ حضرت امام اعظم ابو حنیفہ رضی اللہ تعالٰی‬
  • ‫عنہ ہیں ان کی ذمہ داری پر سفر کر رہے ہیں، غیر مقلد وہابی‬‫خود اپنی ذمہ داری پر اس سمندر میں چھلنگ لگا رہے ہیں۔‬ ‫انشاءاللہ مقلدوں کا بیڑا پار ہے، اور وہابیوں کا انجام غرقابی‬ ‫ہے۔‬‫آخر میں ہم اہل حدیث حضرات سے پوچھتے ہیں کہ اسلم کی‬ ‫پہلی عبادت نماز ہے، براہ مہربانی آپ احادیث صحیحہ کی‬‫روشنی میں بتا دیں کہ فرض، واجب، سنت، مستحب، مکروہ‬ ‫تحریمی اور حرام میں کیا فرق ہے، اور نماز میں کتنے فرض‬ ‫ہیں، کتنے واجب، کتنی سنتیں، کتنے مستحبات، کتنے مکروہ‬‫تنزیہی، کتنے مکروہ تحریمی اور کتنے حرام، انشاءاللہ تاقیامت‬‫یہ تمام مسائل یہ حضرات حدیث سے نہیں بتا سکتے، حالنکہ‬‫دن رات ان مسائل سے واسطہ ہوتا ہے تو دوستو ضد کیوں کرتے‬ ‫ہو، تقلید اختیار کرو، جس میں دین و دنیا کی بھلئی ہے۔‬
  • ‫خدا کا شکر ہے کہ یہ کتاب یکم رمضان سنہ 6731 ھ اپریل‬ ‫7591ء روز و شبنہ کو شروع ہو کر 3ذی الحجہ سنہ 6731ء‬ ‫بروز شبنہ یعنی دو ماہ دو دن میں اختتام کو پہنچی۔ رب تعالٰی‬ ‫اپنے حبیب صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم کے صدقے اسے قبول‬ ‫فرمائے، میرے لئے کفارہ سیات اور صدقہ جاریہ بنائے، مسلمانوں‬ ‫کے لئے اسے نافع بنائے جو کوئی اس کتاب سے فائدہ اٹھائے وہ‬ ‫مجھ بے کس گنہگار کے لئے حسن خاتمہ اور معافی سیات کی‬ ‫دعا کرے کہ اس ہی للچ میں میں نے یہ محنت کی ہے۔‬‫احمد ابن تیمیہ حرانی اور اس پر اعتراضات‬ ‫احمد ابن تیمیہ حرانی اور اس پر اعتراضات‬ ‫محمد ابن عبد الوھاب کے امام ، احمد ابن تیمیہ‬ ‫جس کے آراء و افکار کی اس نے تقلید کی ھے اور‬ ‫جس کے عقائد کو اس نے اخذ کیا اور جس پر اپنے‬ ‫دین کی بنیاد رکھی اور نتیجہ میں صراط مستقیم‬ ‫سے نہ صرف خود بھٹکا بلکہ اور بھت سے مسلمانوں‬
  • ‫کو بھی گمراہ کیا ھے اس کے بارے میں علماء کے‬ ‫اقوال نقل کئے جاتے ھیں ۔‬ ‫چنانچہ علماء مکہ کے بقول جیسا کہ کتاب “ سیف‬ ‫الجبار المسلول علی اعداء ال برار،، طبع ترکیہ‬ ‫۹۷۹۱ ءء کے ص ۴۲ پر ھے کہ : بدبخت ابن تیمیہ کے‬‫دور کے علما نے اس کی گمراھی اور اس کے قید کر‬ ‫نے پر اجماع کیا ھے اور اعلن کیا گیا ھے کہ جو‬ ‫شخص ابن تیمیہ کے عقیدوں پر ھو گا اس کا مال‬ ‫اور خون مباح ھے ۔“ کش ف الظنون ،،ج ۱ ص ۰۲۲ پر‬‫ھے کہ علماء نے اس کی رد میں بھت مبالغہ کیا ھے‬‫یھاں تک کہ تصریح کی ھے کہ یہ شخص ) ا ب ن تیمیہ‬‫( جسے شیخ السلم کھا گیا ھے ، کافر ھے ، اس کی‬ ‫کتاب کی جلد ۲ ص ۸۳۴۱ پر ھے : اب ن تیمیہ نے اپنی‬‫کتاب “ العرش وصفتہ ،، میں ذکر کیا ھے کہ خداوند‬‫عالم کرسی پر بیٹھتا ھے اور ایک جگہ خالی چھوڑ‬ ‫کر رکھی ھے جھاں رسول صلی ا علیہ و آلہ‬‫وسلم بیٹھیں گے۔ اس کو ابو حیان نے کتاب “ النھر،،‬ ‫میں قول خدا “ وس ع کرسیہ الس م ٰوات والرض ،،کے‬
  • ‫ذیل میں لکھا ھے : میں نے احمد ابن تیمیہ کی کتاب‬ ‫“ العرش ،، میں اسی طرح پڑھاھے ۔ انتھی‬‫احمد ابن تیمیہ حرانی اور اس پر کئے گئے اعتراضات‬ ‫محمد ابن عبد الوھاب کے امام ، احمد ابن تیمیہ‬ ‫جس کے آراء و افکار کی اس نے تقلید کی ھے اور‬ ‫جس کے عقائد کو اس نے اخذ کیا اور جس پر اپنے‬ ‫دین کی بنیاد رکھی اور نتیجہ میں صراط مستقیم‬‫سے نہ صرف خود بھٹکا بلکہ اور بھت سے مسلمانوں‬ ‫کو بھی گمراہ کیا ھے اس کے بارے میں علماء کے‬ ‫اقوال نقل کئے جاتے ھیں ۔‬ ‫چنانچہ علماء مکہ کے بقول جیسا کہ کتاب “ سیف‬ ‫الجبار المسلول علی اعداء ال برار،، طبع ترکیہ‬ ‫۹۷۹۱ ءء کے ص ۴۲ پر ھے کہ : بدبخت ابن تیمیہ کے‬ ‫دور کے علما نے اس کی گمراھی اور اس کے قید کر‬ ‫نے پر اجماع کیا ھے اور اعلن کیا گیا ھے کہ جو‬ ‫شخص ابن تیمیہ کے عقیدوں پر ھو گا اس کا مال‬ ‫اور خون مباح ھے ۔“ کش ف الظنون ،،ج ۱ ص ۰۲۲ پر‬
  • ‫ھے کہ علماء نے اس کی رد میں بھت مبالغہ کیا ھے‬‫یھاں تک کہ تصریح کی ھے کہ یہ شخص ) ا ب ن تیمیہ‬‫( جسے شیخ السلم کھا گیا ھے ، کافر ھے ، اس کی‬ ‫کتاب کی جلد ۲ ص ۸۳۴۱ پر ھے : اب ن تیمیہ نے اپنی‬‫کتاب “ العرش وصفتہ ،، میں ذکر کیا ھے کہ خداوند‬ ‫عالم کرسی پر بیٹھتا ھے اور ایک جگہ خالی چھوڑ‬ ‫کر رکھی ھے جھاں رسول صلی ا علیہ و آلہ‬ ‫وسلم بیٹھیں گے۔‬ ‫اس کو ابو حیان نے کتاب “ النھر،، میں قول خدا‬ ‫“ وس ع کرسیہ الس م ٰوات والرض ،،کے ذیل میں لکھا‬ ‫ھے : میں نے احمد ابن تیمیہ کی کتاب “ العرش ،،‬ ‫میں اسی طرح پڑھاھے ۔ انتھی اور اسی کتاب کے‬ ‫ص ۸۷۰۱ پر احمد ابن تیمیہ جنبلی کی ایک کتاب‬‫بنام “ الصراط المستقیم والرد علی اھل الجحیم ،، کا‬ ‫ذکر کیا ھے اور اسی میں ایسی باتیں لکھی ھیں‬ ‫جن کا تذکرہ کرنا مناسب نھیں ھے مثل عبد ا ابن‬ ‫عباس کو کافر قرار دینا ۔حصینی نے اپنی کتاب میں‬ ‫اس کی رد لکھی ھے ۔ جامعہ ا زھر کے ایک عالم‬
  • ‫شیخ محمد نجیت مطیعی حنفی نے اپنی کتاب “‬ ‫تطھیر الفواد من دنس ال عتقاد ،،مینص ۹ پر ابن‬ ‫تیمیہ کے بارے میں لکھا ھے کہ اس نے اپنی کتاب‬ ‫“ الواسطہ ،، وغیرہ کی تالیف کی تو ایسی باتیں‬‫گڑھیں جن سے مسلمانوں کے اجماع کو پارہ کر دیا ۔‬ ‫اس نے کتاب خدا ، صریح سنت اور سلف صالح کی‬ ‫مخالفت کی ھے۔‬ ‫اپنی فاسد عقل کا مطیع ھوا ھے اور جان بوجہ کر‬ ‫گمراہ ھواھے ۔اس کا معبود اس کی ھوائے نفس‬ ‫ھے۔ اسے یہ گمان ھوا ھے کہ جو کچہ اس نے بیان‬ ‫کیا ھے حق ھے حالنکہ وہ حق نھیں ھے بلکہ یہ‬‫جھوٹ اور قول منکر ھے ،اور اسی کتاب کے ص ۳۱ پر‬ ‫ھے : ی ہ کتاب ابن تیمیہ کی بھت سی من گڑھت‬ ‫باتوں پر مشتمل ھے جوکتاب و س ن ّت اور جماعت‬ ‫مسلمین کے مخالف ھے ۔‬‫اور صفحھ ۰۱ /۱۱ پر ھ ے: و ہ برابر اکابر کے پیچھے پڑا‬ ‫رھا یھاں تک کہ اس کے زمانے والے اس کے خلف‬‫مجتمع ھوئے اسے فاسق قرار دیا اور بدعتی ٹھھرایا‬
  • ‫بلکہ ان میں سے زیا دہ لوگوں نے اسے کافر قرار‬ ‫دیا ۔‬ ‫اور صفحہ ۷۱ پر ھے : اپن ے زمانے میں ابن تیمیہ کا‬ ‫وتیرہ ادب اورھر زمانے میں اس کے پیرووں کا یھی‬ ‫:طریقہ رھا ھے کھ‬ ‫یقولون آم ن ّا بالله و بالیوم الخروما ھم بمومنین ، “‬ ‫یخادعون اللهوالذین آمنوا وما یخدعون الانفسھم‬‫وما یشعرون ،،یہ لوگ کھتے ھیں کہ ھم ا اور روز‬ ‫قیامت پر ایمان لئے ھیں حالنکہ یہ مومن نھیں‬‫ھیں ۔یہ ا کو اور ایمان والوں کو دھوکہ دیتے ھیں‬ ‫حالنکہ یہ خود اپنے کو دھوکہ دے رھے ھیں اور‬ ‫،،انھیں اس کا احساس نھیں ھے ۔‬ ‫مؤلف کھتا ھے : ی ہ منافقیں کی صفت ھے جسے خدا‬‫وند عالم نے اپنی کتاب قرآن کریم میں بیان کیا ھے ۔‬‫اور یافعی نے “ مرآةالجنان ،،ج ۴/ص ۰۴۲ طبع حیدرآباد‬ ‫دکن ۹۳۳۱ ھئمطبع دائرةالمعارف النظامیہ میں ابن‬ ‫تیمیہ کے بعض مھمل اقوال کا ذکر کیا ھے مث ل ًلکھا‬‫ھ ے: خد ا حقیقتاعرش پر بیٹھا ھے اور الفاظ وآواز سے‬
  • ‫گفتگو کرتا ھے پھرلکھا ھے کہ دمشق مینیہ اعل ن‬‫کردیا گیا کہ جو شخص ابن تیمیہ کے عقیدہ پر ھوگا‬ ‫اس کی جان اور اس کا مال مباح ھے ۔‬‫اور صفحھ ۸۷۲ پر ۸۲۷ ئکے واقعات کے سلسلہ میں ھے‬ ‫: ا س ) ا ب ن تیمیہ ( ک ے عجیب وغریب مسائل ھیں جن‬‫کے بارے میں اس پر طعن وتشنیع کی گئی ھے اورجن‬ ‫کے سبب مذھب اھل س ن ّت ترک کرنے کی خاطر اسے‬ ‫قید کیا گیا ۔پھر اس کی بھت سی برائیوں کو شمار‬‫کراتے ھوئے لکھا ھے ک ھ: ا س کی قبیح ترین برائی یہ‬ ‫تھی کہ اس نے پیغبر اسلم ص ل ّی ا علیہ وآلہ‬ ‫وسلم کی زیارت سے منع کر دیا تھا ۔آپ پر اور‬ ‫دوسرے اولیاء خدا اور اس کے برگزیدہ بندوں پر‬ ‫طعن و تشنیع کی تھی اور اسی طرح م س ٴلہ طلق‬ ‫وغیرہ کے سلسلہ میں اس کا مسلک اور جھت کے‬ ‫بارے میں اس کا عقیدہ اور اس بارے میں جوباطل‬ ‫اقوال اس سے نقل ھوئے ھیں یہ سب اور اس کے‬ ‫علوہ اور بھی بھت سی باتیں اس کے قبائح میں‬ ‫سے ھیں ۔‬
  • ‫شیخ ابن حجر ھیتمی نے “ تحف ہ ،،میں لکھا ھے : خ د ا‬ ‫کی جسمیت یا اس کے جھت میں ھونے کا دعو ی ٰ‬‫ایساھے کہ اگر کوئی اس کا عقیدہ رکھے تو کافر ھے‬ ‫۔سفینةالراغب ص ۴۴ طبع بولق مصر ۵۵۲۱ ئ‬ ‫شیخ یوسف نبھانی نے اپنی کتاب “ شواھدالحق ،،کے‬ ‫صفحہ ۷۷۱ پر لکھا ھے : چوتھ ا باب ،ابن تیمیہ کے‬ ‫اوپرعلماء مذاھب اربعہ کے اعتراضات کی عبارتیں‬‫اور اس کی کتابوں پر کئے گئے ایرادات اور بعض اھم‬ ‫مسائل جیسے خدا وندعالم کا ایک خاص جھت‬ ‫وسمت میں ھونا ،کے بارے میں اھل س ن ّت کی‬ ‫مخالفت کے بیان میں ۔پھر ایک جماعت کا ذکر کیا‬ ‫: ھے جنھوں نے اس پر طعن کیاھے لکھا ھے‬ ‫انھیں طعن کرنے والوں میں سے امام ابوحیان “‬‫ھینجو ابن تیمیہ کے دوست تھے ۔جب اس کی بدعتوں‬ ‫سے با خبر ھوئے تو اس کو بالکل چھوڑ دیا اور‬‫لوگوں کو اس سے دور رھنے کی تاکید کی ۔اور انھیں‬‫میں سے امام عزالدین ابن جماعةھیں انھوں نے اس‬ ‫،،کی رد کی ھے اور اسے برا کھا ھے ۔‬
  • ‫انھیں میں سے مل علی قاری حنفی ھیں انھوں نے‬ ‫: شفاء کی شرح میں لکھا ھے‬ ‫حنبلیوں میں سے ابن تیمیہ نے افراط سے کام لیا‬‫چنانچہ اس نے زیارت نبی کے لئے سفر کرنے کو حرام‬ ‫قرار دیا ھے ۔اسی طرح اس کے مقابل والے نے بھی‬ ‫افراط سے کام لیا ھے چنانچہ کھا ھے : زیار ت کا‬ ‫باعث تقرب خدا ھونا ضرویات دین میں سے ھے اور‬ ‫اس کا انکار کرنے وال کافر ھے ۔اور شاید یہ دوسرا‬‫قول حق سے قریب ھے کیونکہ جس کے مستحب ھونے‬ ‫پر اجماع ھو اس کا حرام قراردینا کفر ھوگاکیونکہ‬ ‫یہ مباح متفق علیہ کے حرام قرار دینے سے بڑہ کر‬ ‫ھے۔‬ ‫اور انھیں میں سے شباب الدین خفاجی حنفی ھیں‬ ‫جن کے کلم کو اس طرح ذکر کیا ھے : اب ن تیمیہ نے‬ ‫ایسی خرافات باتیں لکھی ھیں جن کا ذکر کرنا‬ ‫مناسب نھیں کیونکہ یہ باتیں کسی عقلمند انسان‬ ‫کی ھو ھی نھیں سکتینچہ جائیکہ ایک پڑھے لکھے‬ ‫آدمی کی زبان اورقلم سے صادر ھو ں ۔چنانچہ ابن‬
  • ‫تیمیہ کا یہ کھنا کہ “ قب ر پیغمبر اسلم کی زیارت‬ ‫حرام کام ھے ،،کذب محض،لغو ھے اوربکواس ھے ۔‬ ‫اس کا یہ کھنا “ ا س کے بارے مےں کوئی نقل موجود‬‫نھیں ھے ،،باطل ھے کیونکہ امام مالک ،امام احمد ،‬‫اور امام شافعی رضی اللهعنھم کا مذھب یہ ھے کہ‬ ‫سلم ودعا مینقبر شریف کی طرف رخ کرنا مستحب‬ ‫ھے اور یہ بات ان بزرگوں کی کتابونمیں درج ھے۔‬ ‫اور انھیں میں سے امام محمدزرقانی مالکی ھیں ۔‬ ‫) ب ن ھان ی نے ان کے کچہ کلم کو مواھب لدنیہ کی‬ ‫شرح میں نقل کیا ھے جسے ھم یھانپیش کررھے‬ ‫:ھیں‬ ‫لیکن ابن تیمیہ نے اپنے لئے ایک جدید مذھب ایجاد “‬‫کیا ھے اور وہ ھے قبروں کی تعظیم نہ کرنا ۰۰۰ کیا‬ ‫یہ شخص جس بات کا علم نھیں رکھتا اس کے‬ ‫جھٹلنے سے شرماتاھے؟ اور ابن تیمیہ کی طعن‬‫وتشنیع کے سلسلے میں اپنی پھلی والی بات دھرائی‬ ‫ھے ۔‬ ‫اور انھیں میں سے امام کمال الدین ز ملکانی‬
  • ‫شافعی متوفی ۷۲۷ ھئنے کشف الظنون میں ان کی‬ ‫ایک کتاب“ الذرةالمضیہ فی الرد علی ابن تیمیہ ،،کا‬‫ذکر کیا ھے انھوں نے ان مسائل میں اس سے مناظرہ‬ ‫کیا ھے جن میں وہ مذاھب اربعہ سے منحرف ھوگیا‬ ‫ھے اور ان میں قبیح ترین مسئلہ اس کا انبیاء‬‫وصالحین خصوصاسیدالمرسلین کی قبروں کی زیارت‬‫اور آپ کے وسیلہ سے خدا سے مانگنے کو منع کرنا ھے‬ ‫۔‬‫اور انھیں میں سے امام کبیرشھیر تقی الدین سبکی‬‫شافعی ھی ں ) اب ن تیمیہ پر اعتراضات کو ان کی کتاب‬ ‫شفاء السقام فی زیارت خیر النام علیہ السل م سے‬‫نقل کیا ھ ے ( اس کتاب میں انھوں نے اسے بدعتی کھا‬ ‫ھے ۔ اور انھیں میں سے حافظ ابن حجر عسقلنی‬ ‫شافعی ھی ں ) انھو ں نے اپنی کتاب فتح الباری فی‬‫شرح البخاری میں اس پر رد کی ھے ( ا و ر انھیں میں‬ ‫سے امام عبد الرووف منادی شافعی ھیں انھوں نے‬ ‫شرح شمائل میں کھا ھے : او ر ابن ق ی ّم کا اپنے شیخ‬ ‫ابن تیمیہ کے حوالے سے یہ کھناکہ “ مصطفی ص ل ّی‬
  • ‫ا علیہ وآلہ وسلم نے جب اپنے پرور دگارکو اپنے‬‫دونوں شانوں کے درمیان اپنے ھاتہ رکہ کر دکھائے تو‬ ‫خدااس جگہ کو بالوں کو نوازا ۔اس کی ردشارح‬ ‫یعنی ابن حجرم ک ّی نے اس طرح کی بات ان دو نوں‬‫) ا ب ن تیمیہ وابن قی م ( ک ی بد ترین گمراھی ھے اور یہ‬ ‫ان دونوں کے اس عقیدہ پر مبنی ھے کہ خدا جھت‬ ‫اور جسم رکھتا ھے۔خدا وند عالم ظالموں کے اس‬‫قول سے کھیں بزرگ وبرتر ھے اس کے بعد منادی نے‬ ‫لکھا ھے : ا ب میں کھتا ھوں ان دونونکا بدعتیوں‬ ‫میں سے ھونا مس ل ّم ھے۔‬ ‫اور انھیں میں سے ھمارے دوست عالم با عمل ،‬ ‫فاضل کامل ، شیخ مصطفی ابن احمد سطی جنبلی‬ ‫دمشقی حفظ ا وجزا ہ ا احسن الجزا ء ھیں ۔‬‫مو صوف نے ایک مخصوص رسالہ تالیف کیا ھے جس‬ ‫کا نام ) النقول الشرعیہ فی الرد علی الو ھابیة (‬ ‫ھے۔انھیں میں سے امام شھاب الدین احمد بن حجر‬ ‫ھیثمی مکی شافعی ھیں انھوں نے ابن تیمیہ پر‬ ‫بھت سخت ردو تنقید کی ھے ۔‬
  • ‫اور نبھانی نے شواھدالحق کے ص ۱۹۱ پر پھلے تو ان‬ ‫لوگوں کے نام نقل کئے ھیں جنھوں نے ابن تیمہ کو‬ ‫طعن و تشنیع کی اور جن کا ذکر ابھی گزرا ھے ۔‬ ‫اس کے بعد کھتے ھیں : لھذا ثابت ھوا اور آفتاب‬ ‫نصف النھار کی طرح روشن ھوا کہ علماء مذ ھب‬‫اربعہ نے ابن تیمیہ کی بد عتوں کے رد کرنے پر اتفاق‬ ‫کیا ھے اور کچہ علماء نے اس کی نقل کی صحت پر‬ ‫طعن کیا ھے تو بھل جن مسائل میں دین سے‬ ‫انحراف کیا ھے اور اجماع مسلمین کی مخالفت کی‬ ‫ھے خاص کر ان مسائل میں جو سید المر سلین سے‬ ‫متعلق ھیں اس کی کھلی ھوئی غلطی پر سخت‬ ‫طعن وتشنیع کیوں نہ کرتے ۔‬ ‫حنفیوں میں سے جنھوں نے اس کی نقل کے صحیح‬ ‫ھونے پر طعن کیا ھے شھاب الدین خفاجی شارح‬ ‫الشفا ء ھیں جن کا ذکر گزر چکا ھے ۔ اور مالکیوں‬ ‫میں سے امام زرقانی ھیں شرح مواھب میں ، یہ تذ‬ ‫کرہ بھی گزر چکا ھے ۔ اور شافیوں میں سے امام‬‫سبکی ھیں جیسا کہ ان کی کتاب شفاء السقام میں‬
  • ‫مذ کور ھے اس میں انھوں نے یہ واضح کیا ھے کہ نہ‬‫صرف یہ کہ ابن تیمیہ کی رائے غلط ھے بلکہ اس کے‬ ‫نقل کئے ھوئے وہ احکام شرعیہ بھی صحیح نھیں‬‫ھیں جس کے ذریعہ اس نے اپنی بدعت کی تقویت پر‬ ‫استدلل کیا ھے اور انھیں مذاھب اربعہ کی طرف‬ ‫منسوب کیا ھے حالنکہ ائمہ مذا ھب اربعہ نے وہ‬ ‫احکام نھیں بیان کئے ھیں ۔اسی طرح اس کے نقل‬‫کی عدم صحت کا ذکر امام ابن حجر ھیثمی نے بھی‬ ‫اس کے اوپر اپنے اعترا ضات میں کیا ھے اور یہ بات‬‫پو شیدہ نھیں ھے کہ یہ چیز ایک عالم کے اندر بھت‬ ‫بڑاعیب اور بھت بڑا اخلقی جرم ھے جو اس پر‬ ‫اعتماد کو ضعیف کر دیتا ھے اور اس کے منقولت کے‬ ‫اعتبار کو ساقط کر دیتا ھے چاھے وہ احفظ حفاظ‬ ‫اورا علم علماء میں سے ھو اور ابن تیمیہ کے منقو‬ ‫لت کے معتبر نہ ھونے کی تقویت اس قول سے بھی‬‫ھوتی ھے جو اس کے بارے میں حافظ عراقی نے کھا‬ ‫ھے۔ کلم نھبانی تمام ھوا ۔شواھد الحق ص ۷۷۱ تا‬ ‫۱۹۱‬
  • ‫ابن تیمیہ کا ذکر ڈاکٹر حامد حفنی داوود حنفی نے‬ ‫بھی اپنی کتاب ) نظرات فی الکتب الخالد ة ( ص ۱۳‬‫مطبوعہ مصر ۹۹۳۱ ء دارالمعلم للطباعة میں کیا ھے‬ ‫اور اسے بدعتی قرار دیا ھے اور حاشیہ میں اس‬ ‫کلمہ پر نوٹ لگایا ھے کہ : اکثر علماء اھل س ن ّت نے‬ ‫اس کے بد عتی ھونے کا قول اختیار کیا ھے رہ گئے‬‫صوفیہ تو انھوں نے اس پر اجماع کیا ھے ، امام تقی‬ ‫الدین سبکی اور ابن تیمیہ کے درمیان فقہ وعقیدہ‬‫کے اکثر گوشوں کے بارے میں خط وکتابت ھوتی ھے ۔‬ ‫دیکھئے ھماری کتاب ) ا ل تشری ع ال سلمی فی مصر (‬ ‫انتھی ۔‬ ‫عبدالغنی حمادہ اپنی کتاب ) فضل الذاکرین والرد‬ ‫علی المنکر ین ( طبع سوریہ ا َ د ْ ل َ ب ْ ۱۹ ۳۱ ء ص ۳۲‬ ‫: پر اس طرح وھابیت پر طعن کر تے ھیں‬‫شیخ وھابیت ابن تیمیہ کے بارے میں علمہ مصر علء‬ ‫الدین بخاری نے لکھاھے کہ : ابن تیمیہ کافر ھے‬ ‫جیسا کہ اس کے زمانے کے بزر گ عالم زین الدین‬‫حنبلی نے کھا ھے کہ میرا اعتقاد یہ ھے کہ ابن تیمیہ‬
  • ‫کافر ھے اور کھتے تھے کہ امام سبکی رضی ا عنہ‬ ‫ابن تیمیہ کی تکفیر سے معذور ھیں کیونکہ اس نے‬ ‫امت اسلمیہ کو کافرقرار دیا ھے اور اسے قول‬‫خدا :“ اتخ ذ وااحبار ھم ورھبانھم ار بابا من دون ا‬‫،،کی تفسیر کر تے ھوئے یھودو نصار ی ٰ سے تشبیہ دی‬‫ھے۔ علماء مذاھب نے لکھا ھے کہ : ابن تیمیہ زندیق‬ ‫ھے کیونکہ وہ پیغمبر اسلم اور آپ کے دونوں‬‫ساتھیوں کی توھین کرتا تھا اور اس کی کتابیں خدا‬ ‫وند عالم کی تشبیہ اور اسے صاحب جسم قرار دینے‬ ‫سے بھری ھوئی ھیں ۔‬‫اور اس کے زمانے کے علمہ ابن حجر رضی ا عنہ نے‬ ‫کھا ھے ۔ ابن تیمیہ ایک ایسا بندہ ھے جسے خدا نے‬‫رسوا ، گمراھ، اندھا ، بھرا اور ذلیل کیا ھے ۔اس کے‬ ‫خلف مذاھب اربعہ میں سے اس کے دور کے علماء‬ ‫اٹہ کھڑے ھوئے اور اکثر نے اس کو فاسق اور کافر‬ ‫قرار دیا ھے ۔علماء نے کھا ھے کہ ابن تیمیہ نے‬ ‫صحابہ کرام رضی ا عنھم کو کافر قرار دینے میں‬ ‫خوارج کے مذ ھب کا اتباع کیا ھے ۔‬
  • ‫اور ائمہ حفاظ نے کھا ھے کہ ابن تیمیہ خوارج میں‬ ‫سے ھے ،جھوٹا ھے ، شریر ھے ، افترا پر داز‬ ‫ھے ۔“ فض ل الذا کرین ،،میں لفظ بہ لفظ مو جود‬ ‫ھے ۔‬ ‫اور ابو حامد مرزوق شامی نے اپنی کتاب ۔ “ التوسل‬ ‫بال ن ّبی وبا لصالحین ،،مطبوعہ تر کیہ طبع آفسٹ ۴۸‬ ‫: ۹۱ ءء کے ص ۴ پر لکھا ھے‬ ‫ایک بار ابن تیمیہ نے دمشق کے ممبر پر جانے کے “‬‫بعد کھا : “ خدا وند عالم اسی طرح عرش سے اتر تا‬ ‫ھے جیسے میں ممبر سے اتر رھا ھوں اور ایک زینہ‬ ‫نیچے اتر کر دکھایا ھے ، ، اس کے بعد ابو حامد نے‬ ‫لکھا ھے کہ اس واقعہ کو دیکھنے والوں میں فقیہ‬ ‫سیاح ابن بطوطہ مغری بھی ھیں اور “ التوسل‬ ‫بال ن ّبی وبالصالحین ،،کے ص ۶ پر ابن تیمیہ سے نقل‬‫کیا ھے کہ ابن تیمیہ نے لکھا ھے کھ “ خدا حق تعال ی ٰ‬ ‫عرش کے اوپر ھے ،، اور اسی کتاب کے ص ۶۱۲ پر‬ ‫کتاب “ دفع شبہ من ش ب ّہ وتم ر ّد ،،طبع مصر ۰۵ ۳۱ ء‬ ‫ہ مطبع عیس ی ٰ حلبی ، تصنیف ابو بکر حصنی‬
  • ‫دمشقی متوفی ۹۲۸ ء سے نقل کر تے ھوئے لکھا ھے‬ ‫کہ مصنف مذکور نے ابن تیمیہ کے بارے میں کھا‬ ‫ھے : “ میں نے اس خبیث ) ا ب ن تیمیہ ( کے کلم کو‬‫دیکھا جس کے دل میں انحراف کا مرض ھے جو فتنہ‬ ‫پیدا کر نے کے لئے متشابہ آیات و احادیث کا اتباع کر‬ ‫تا ھے اور عوام و غیر عوام میں سے ان لوگوں نے‬ ‫اس کی پیروی کی جس کے ھلک کر نے کا خدا نے‬ ‫ارادہ کیا تھا ، میں نے اس میں ایسی باتیں پائیں‬ ‫جن کو ادا کر نے کی مجھ میں قدرت نھیں ھے اور‬ ‫نہ میری انگلیوں اورقلم میں انھیں تحریر کر نے کی‬ ‫جرات ھے کیو نکہ اس نے پر وردگار عالم کی اس‬‫بات پر تکذیب کی ھے کہ اس نے کتاب مبین میں اپنے‬‫کو منزہ قرار دیا ھے ۔اسی طرح اس کے بر گزیدہ اور‬ ‫منتخب افراد خلفاء راشدین اور ان کے صالح‬ ‫پیروکاروں کی توھین اور عیب جوئی کی ھے لھذا‬ ‫میں نے ان کا ذکر کرنا مناسب نہ جانا اور صرف ان‬ ‫باتوں کو ذکر کیا جنھیں ائمہ متقین نے ذکر کیا تھا‬ ‫اور جن پر ان کا اتفاق ھے وہ یہ کی ابن تیمیہ بد‬
  • ‫عتی اور دین سے خارج ھے ۔‬ ‫حافظ ابن حجر نے “ الفتاوی الحدیثیہ ،، ص ۶۸ پر‬ ‫لکھا ھے کہ “ ابن تیمیہ ایسا بندہ ھے جسے خدا نے‬ ‫رسوا ، گمراہ ، اندھا ، بھرہ ، اور ذلیل بنا دیا ھے‬ ‫اور اسی بات کی تصریح ان اماموں نے بھی کی ھے‬ ‫جنھوں نے اس کے فاسد ھونے اور اس کی باتوں کو‬‫جھوٹ ھونے کا بیان کیا ھے اور جو شخص اسے جاننا‬‫چاھتا ھو وہ امام مجتھد ابوالحسن سبکی جن کی ،‬ ‫امامت ، جللت ، شان اور مرتبہ اجتھاد تک پھنچنے‬ ‫پر اتفاق ھے ان کے اور ان کے فرزند تاج اور شیخ‬ ‫امام ع ز ّ بن جماعہ اور شافعیہ ، مالکیہ ، حنفیہ ،‬ ‫میں سے ان کے ھم عصر علماء کے کلم کو مل حظہ‬ ‫کریں ، ابن تیمیہ نے صرف متاخرین صوفیہ کے اوپر‬ ‫اعتراض کرنے پر اکتفاء نھیں کی ھے بلکہ عمر ابن‬ ‫خطاب اور علی ابن ابی طالب رضی ا عنھما ،،‬ ‫جیسے حضرات پر بھی اعتراض کیا ھے۔‬ ‫خلصہ یہ کہ اس کے کلم کی کوئی قدرو قیمت‬ ‫نھیں ھے اور چاھئے کہ اس کے بارے میں یہ عقیدہ‬
  • ‫رکھا جائے کہ وہ بد عتی گمراہ ،گمراہ کن ، جاھل‬ ‫اور غلو کر نے وال ھے ، خدا اس کے ساتھ اپنے عدل‬ ‫سے معاملہ کرے اور ھمیں اس کے طریقہ ، عقیدہ ،‬ ‫اور عمل سے محفوظ رکھے ۔ آمین ۔‬ ‫کلم ابن حجر تمام ھوا اسے ھم نے تطھیر الفواد‬‫من دنس ال عتقاد ص ۹ طبع مصر ۸۱۳۱ ء ہ تصنیف‬ ‫شیخ محمد نجیت مطیعی حنفی سے نقل کیا ھے۔‬‫اس کے بعد کھا کہ وہ خدا کے لئے سمت کا قائل ھے‬ ‫جس کا لزمی نتیجہ یہ ھے کہ وہ خدا کے لئے‬ ‫جسمیت ، محاذات ،اور استقرار کا قائل ھے ۔‬ ‫کتاب “ التوسل با ل ن ّبی وبا لصالحین ،، میں ابن تیمیہ‬ ‫پر اور بھی بھت سے طعن ھیں جن کو چند عناوین‬ ‫کے تحت ذکر کیا ھے ، جو حسب ذیل ھیں ۔‬‫ع لمہ شھاب الدین احمد بن یحی ی ٰ حلبی کی جھت ۰‬ ‫ّ‬ ‫کے بارے میں ابن تیمیہ پر رد۔‬‫ابن تیمیہ کے اس زعم کا ابطال کہ خدا حق تعال ی ٰ ۰‬ ‫عرش کے اوپر ھے ۔‬ ‫عقیدہ ابن تیمیہ جس کے سبب اس نے جماعت ۰‬
  • ‫مسلمین سے مخالفت کی ھے اور انھیں برا کھا ھے‬ ‫جسے قر آن میں طعن کر نے والے او باش ملحدین‬ ‫سے حاصل کیا ھے ۔‬ ‫ابن تیمیہ کی تمام علماء اسلم سے مخالفت ۔ ۰‬ ‫ابن تیمیہ کے فتؤوں کے نمو نے‬ ‫عالم کبیر شیخ محمد بخیت حنفی عالم جامعہ ا‬‫زھرنے اپنی کتاب “ تطھر الفواد من دنس ال عتقاد ،،‬ ‫طبع مصر مطبو عہ ۸۱۳۱ ئکے ص ۲۱ پر اس شخص‬‫کے کچہ فتووں کا ذکر کیا ھے جن میں سے بعض نمو‬ ‫نے ھم یھاں پر پیش کر رھے ھیں تا کہ ایک غیر‬ ‫جانبدارقاری کو اس کے انحراف ، فاسد عقیدے اور‬ ‫منحرف فتووں میں علماء اسلم سے اس کی‬ ‫مخالفت کا زیا دہ سے زیا دہ علم ھو سکے ۔‬‫اگر کو ئی شخص جان بو جہ کر نماز تر ک کر دے “‬ ‫“تو اس کی قضا وا جب نھیں ھے۔‬ ‫حیض والی عورت کے لئے خانہ ء کعبہ کا طواف “‬ ‫“کرنا جائز ھے اور اس پر کوئی کفارہ نھیں ھے۔‬ ‫تین طلق ایک طلق کی طرف پلٹایا جائے گ ا “ اور “‬
  • ‫اس بات کا دعو ی ٰ کر نے سے پھلے خود اسی نے نقل‬ ‫کیا ھے کہ اجماع مسلمین اس کے بر خلف ھے ۔‬ ‫جس اونٹ کے پیر کی موٹی والی نسیں کاٹ دی “‬ ‫گئی ھوں وہ کاٹنے والے کے لئے حلل ھے اور وہ جب‬ ‫تاجروں سے لے لیا جائے تو زک و ٰة کے عوض کافی ھے‬ ‫،،اگر چہ زک و ٰة کے نام سے نہ لیا گیا ھو ۔‬‫بھنے والی چیزوں میں اگر جاندار مثل چوھا مر جائے‬ ‫“تو یہ چیزیں نجس نھیں ھو تیں‬‫جنب کو چاھئے کہ حالت جنا بت میں نافلہ شب پڑھے‬ ‫اور تا خیر نہ کرے کہ فجر سے پھلے غسل کر کے‬ ‫“پڑھے گا اگر چہ اپنے ھی شھر میں ھو ۔‬‫وقف کرنے والے کی شرط کا کوئی اعتبار نھیں ھے “‬‫بلکہ اگر اس نے شا فعیہ پر وقف کیا ھے تو حنفیہ پر‬‫صرف کیا جائے گا اور بر عکس ،اور قاضیوں پر وقف‬ ‫،،کیا ھے تو صو فیہ پر صرف کیا جائے گا ۔‬‫اسی طرح عقائد اور اصول دین کے مسائل میں بھی‬ ‫انحراف کا مر تکب ھوا ھے۔‬ ‫خدا وند عالم محل حوا دث ھے“ تعال ی ٰ عن ذالک ْ‬
  • ‫علوا کبیرا‬ ‫خدا مرکب ھے اس کی ذات ویسے ھی محتاج ھے‬ ‫جیسے کل اپنے جزء کا محتاج ھوتا ھے “ ت َ ع َا ل ی ٰ ع َ ن ْ‬ ‫،، ذ َا ل ِ ک َ‬ ‫خدا جسم رکھتا ھے،وہ خاص سمت میں ھے ایک‬ ‫جگہ سے دوسری جگہ منتقل ھوتا ھے ،وہ ٹھیک‬ ‫عرش کے برابر ھے نہ چھوٹا نہ بڑ ا “) خ د ا وندعالم‬‫اس قبح وبد ترین افترا ء اور صریحی کفر سے کھیں‬‫بال تر ھے ۔خدا اس کے پیرووں کو رسوا کرے اور اس‬ ‫) کے معتقدین کا شیرازہ منتشر کرے‬ ‫“جھنم فنا ھوجائے گی ،انبیاء معصوم نھیں ھیں۔‬‫رسول ا ص ل ّی ا علیہ وآلہ وس ل ّم کی کوئی وقعت‬ ‫“نھیں ھے ۔ان سے توسل نہ کیا جائے۔‬ ‫پیغمبر اسلم کی زیا رت کے لئے سفر کرنا معصیت‬ ‫“ھے اس سفر میں نمازقصر نھیں ھوگی۔‬